Wednesday, July 28, 2010

The myth of history By Prof Shahida Kazi.

Before you read Prof. Shahida Kazi's excellent reasearch [translation in Urdu is in the end courtesy Mr. Awais Masood] I would like to add the following:

Pakistani recruiters claimed difficulty in securing volunteers in East Pakistan. West Pakistanis held that Bengalis were not "martially inclined"--especially in comparison with Punjabis and Pathans, :REF Library of Congress Country Studies :@field(DOCID+bd0139) - NOW READ: Pakistani author Hasan-Askari Rizvi notes that the limited recruitment of Bengali personnel in the Pakistan Army was because, the West Pakistanis, "could not overcome the hangover of the martial race theory". Ref: Military, State and Society in Pakistan by Hasan-Askari Rizvi. Late. K K Aziz in his magnum opus "Murder of History " had opined that every Reforme Movement or Resistance Movement against Imperialism, and against Feudal Lords were started in Bengal. [Do watch the Conversation with IDRC President David M. Malone, historian Romila Thapar, widely recognized as India's foremost historian challenged the colonial interpretations of India's past, which have created an oversimplified history that has reinforced divisions of race, religion, and caste. Courtesy: IDRCCRDI

The myth of history By Prof Shahida Kazi

History is a discipline that has never been taken seriously by anyone in Pakistan. As a result, the subject has been distorted in such a way that many a fabricated tale has become part of our collective consciousness. Does mythology have anything to do with history? Is mythology synonymous with history? Or is history mythology?

Admittedly, the line between the two is a very fine one. From time immemorial, man has always been in search of his roots. He has also been trying to find a real and tangible basis for the legends of ancient days - legends that have become a part of our collective consciousness. As a result, we witness the quest for proving the existence of King Arthur, the search for whereabouts of the city of Troy, and many expeditions organized to locate the exact site of the landing of Noah’s Ark.

During the ’60s and the ’70s, there was a worldwide movement to prove that the ’gods’ of ancient mythologies did actually exist; they came from distant galaxies; and that mankind owed all its progress to such alien superheroes. Several books were written on the subject.

We, in Pakistan, are a breed apart. Lacking a proper mythology like most other races, we have created our own, populated by a whole pantheon of superheroes who have a wide range of heroic exploits to their credit.

But the difference is that these superheroes, instead of being a part of a remote and prehistoric period, belong very much to our own times. A seemingly veritable mythology has been created around these heroes, their persona and their achievements, which is drummed into the heads of our children from the time they start going to school. So deep is this indoctrination that any attempt to uncover the facts or reveal the truth is considered nothing less than blasphemous.

Here are some of the most common myths:

Myth 1

Our history begins from 712AD, when Mohammad bin Qasim arrived in the subcontinent and conquered the port of Debal.

Take any social studies or Pakistan studies book, it starts with Mohammad bin Qasim. What was there before his arrival? Yes, cruel and despotic Hindu kings like Raja Dahir and the oppressed and uncivilized populace anxiously waiting for a ’liberator’ to free them from the clutches of such cruel kings. And when the liberator came, he was welcomed with open arms and the grateful people converted to Islam en mass.

Did it really happen? This version of our history conveniently forgets that the area where our country is situated has had a long and glorious history of 6,000 years. Forget Moenjo Daro. We do not know enough about it. But recorded history tells us that before Mohammad Bin Qasim, this area, roughly encompassing Sindh, Punjab and some parts of the NWFP, was ruled by no less than 12 different dynasties from different parts of the world, including the Persians (during the Achamaenian period), the Greeks comprising the Bactrians, Scthians and Parthians, the Kushanas from China, and the Huns (of Attila fame) who also came from China, besides a number of Hindu dynasties including great rulers like Chandragupta Maurya and Asoka.

During the Gandhara period, this region had the distinction of being home to one of the biggest and most important universities of the world at our very own Taxila. We used to be highly civilized, well-educated, prosperous, creative and economically productive people, and many countries benefited a lot from us, intellectually as well as economically. This is something we better not forget. But do we tell this to our children? No. And so the myth continues from generation to generation.

Myth 2

Mohammad Bin Qasim came to India to help oppressed widows and orphan girls.

Because of our blissful ignorance of history, we don’t know, or don’t bother to know, that this period was the age of expansion of the Islamic empire. The Arabs had conquered a large portion of the world, comprising the entire Middle East, Persia, North Africa and Spain. Therefore, it defies logic that they would not seek to conquer India, the land of legendary treasures.

In fact, the Arabs had sent their first expedition to India during Hazrat Umar Farooq’s tenure. A subsequent expedition had come to Makran during Hazrat Usman’s rule. But they had been unsuccessful in making any in-roads into the region. Later on, following the refusal of the king to give compensation for the ships captured by pirates (which incidentally included eight ships full of treasures from Sri Lanka, and not just women and girls), two expeditions had already been sent to India, but they proved unsuccessful. It was the third expedition brought by Mohammad Bin Qasim which succeeded in capturing Sindh, from Mansura to Multan. However, because of the Arabs’ internal dissension and political infighting, Sindh remained a neglected outpost of the Arab empire, and soon reverted to local kings.

Myth 3

The myth of the idol-breaker.

Mahmood Ghaznavi, the great son of Islam and idol-breaker par excellence, took upon himself to destroy idols all over India and spread Islam in the subcontinent.

Mahmud, who came from neighbouring Ghazni, Central Asia, invaded India no less than 17 times. But except Punjab, he made no attempt to conquer any other part of the country or to try and consolidate his rule over the rest of India. In fact, the only thing that attracted him was the treasures of India, gold and precious stones, of which he took care and carried back home a considerable amount every time he raided the country. Temples in India were a repository of large amounts of treasure at the time, as were the churches in Europe, hence his special interest in temples and idols.

Contrary to popular belief, it was not the kings, the Central Asian sultans who ruled for over 300 years and the Mughals who ruled for another 300 years, who brought Islam to the subcontinent. That work was accomplished by the Sufi Sheikhs who came to India mainly to escape persecution from the fundamentalists back home, and who, through their high-mindedness, love for humanity, compassion, tolerance and simple living won the hearts of the people of all religions.

Myth 4

The myth of the cap-stitcher.

Of all the kings who have ruled the subcontinent, the one singled out for greatest praise in our text books is Aurangzeb, the last of the great Mughals. Baber built the empire; Humayun lost it and got it back; Akbar expanded and consolidated it; Jahangir was known for his sense of justice; Shahjehan for his magnificent buildings. But it is Aurangzeb, known as a pious man, who grabs the most attention. The prevalent myth is that he did not spend money from the treasury for his personal needs, but fulfilled them by stitching caps and copying out the Holy Quran. Is there any real need for discussing this assertion? Anyone who’s least bit familiar with the Mughal lifestyle would know how expensive it was to maintain their dozens of palaces. The Mughals used to have many wives, children, courtiers, concubines and slaves who would be present in each palace, whose needs had to be met. Could such expenses be met by stitching caps? And even if the king was stitching caps, would people buy them and use them as ordinary caps? Would they not pay exorbitant prices for them and keep them as heirlooms? Would a king, whose focus had to be on military threats surrounding him from all sides and on the need to save and consolidate a huge empire, have the time and leisure to sit and stitch caps? Let’s not forget that the person we are referring to as a pious Muslim was the same who became king after he imprisoned his won father in a cell in his palace and killed all his brothers to prevent them from taking over the throne.

Myth 5

It was the Muslims who were responsible for the war of 1857; and it was the Muslims who bore the brunt of persecution in the aftermath of the war, while the Hindus were natural collaborators of the British.

It is true that more Muslim regiments than Hindu rose up against the British in 1857. But the Hindus also played a major role in the battle (the courageous Rani of Jhansi is a prime example); and if Muslim soldiers were inflamed by the rumour that the cartridges were laced with pig fat, in the case of Hindus, the rumour was that it was cow fat. And a large number of Muslims remained loyal to the British to the very end. (The most illustrious of them being Sir Syed Ahmed Khan.)

Furthermore, the Muslims did not lose their empire after 1857. The British had already become masters of most of India before that time, having grasped vast territories from both Hindu and Muslim rulers through guile and subterfuge.

The Mughal emperor at the time was a ruler in name only; his jurisdiction did not extend beyond Delhi. After 1857, the Hindus prospered, because they were clever enough to acquire modern education, learn the English language, and take to trade and commerce. The Muslims were only land owners, wedded to the dreams of the past pomp and glory, and when their lands were taken away, they were left with nothing; their madressah education and proficiency in Persian proved to be of no help. As a matter of fact, it was a hindrance in such changing times.

Myth 6

The Muslims were in the forefront of the struggle against the British and were singled out for unfair treatment by the latter.

Not at all. In fact, the first ’gift’ given to the Muslims by the British was in 1905 in the form of partition of Bengal (later revoked in 1911). The Shimla delegation of 1906 has rightly been called a ’command performance’; the Muslims were assured by the viceroy of separate electorates and weightage as soon as their leaders asked for them. After that, he Muslim League came into being, established by pro-British stalwarts like the Aga Khan, Justice Amir Ali, some other nawabs and feudal lords. And the first objective of the Muslim League manifesto read: "To promote feelings of loyalty to the British government."

The Muslim League never carried out any agitation against the British. The only time the Muslims agitated was during the Khilafat Movement in the early ’20s, led by the Ali brothers and other radical leaders. Not a single Muslim League leader, including the Quaid-i-Azam, ever went to jail. It was the Congress which continued the anti-British non-violent and non-cooperation movement in the ’30s and ’40s, including the famous ’Quit India’ movement, while Muslim League leaders continued to denounce such movements and exhorted their followers not to take part in them.

Myth 7

The Muslim League was the only representative body of the Muslims.

It is an incontrovertible fact that it was only after 1940 that the Muslim League established itself as a popular party among the Muslims. Prior to that, as evident in the 1937 elections, the Muslim League did not succeed in forming the government in any of the Muslim majority provinces. In those elections, out of the total of 482 Muslim seats, the Muslim League won only 103 (less than one-fourth of the total). Other seats went either to Congress Muslims or to nationalist parties such as the Punjab Unionist Party, the Sind Unionist Party and the Krishak Proja Party of Bengal.

Myth 8

Allama Iqbal was the first person to come up with the idea of a separate Muslim state.

This is one of the most deeply embedded myths in our country and the one which has been propagated by all governments. In fact, the idea that Muslim majority provinces of the north-west formed a natural group and should be considered a single bloc had been mooted by the British as far back as 1858 and freely discussed in various newspaper articles and on political platforms. Several variations of the idea had come from important public personalities, including British, Muslims and some Hindus. By the time Allama Iqbal gave his famous speech in 1930, the idea had been put forward at least 64 times. So, Iqbal voiced something which was already there, and was not an original ’dream’. After his speech at Allahbad was reported, Allama Iqbal published a ’retraction’ in a British newspaper that he had not been talking of a separate Muslim sate, but only of a Muslim bloc within the Indian federation.

Myth 9

The Pakistan Resolution envisaged a single Muslim state.

The fact is that none of the proposals regarding the Muslim bloc mooted by different individuals or parties had included East Bengal in it. The emphasis had always been on north-western provinces, which shared common frontiers, while other Muslim majority states, such as Bengal and Hyderabad, were envisaged as separate blocs. So, it was in the Pakistan Resolution. The resolution reads: "The areas in which the Muslims are numerically in a majority as in the north-western and eastern zones of India should be grouped to constitute independent states, in which the constituent units shall be autonomous and sovereign."

Leaving aside the poor and ambiguous drafting of the entire resolution, the part about states (in plural) is very clear. It was only in 1946, at a convention of the Muslim League legislators in Delhi, that the original resolution was amended, which was adopted at a general Muslim League session and the objective became a single state.

Myth 10

March 23, 1940 is celebrated because the Pakistan Resolution was adopted on that day.The fact of the matter is that the Pakistan Resolution was only introduced on March 23 and was finally adopted on March 24 (the second and final day of the session).

As to why we celebrate March 23 is another story altogether. The day was never celebrated before 1956. It was first celebrated that year as the Republic Day to mark the passage of the first constitution and Pakistan’s emergence as a truly independent republic. It had the same importance for us as January 26 for India. But when Gen Ayub abrogated the constitution and established martial law in 1958, he was faced with a dilemma. He could not let the country celebrate a day commemorating the constitution that he had himself torn apart, nor could he cancel the celebration altogether. A way-out was found by keeping the celebration, but giving it another name: the Pakistan Resolution Day.

Myth 11

It was Ghulam Muhammad who created imbalance of power between the prime minister and head of state, and it was he who sought to establish the supremacy of the governor-general over the prime minister and parliament.

When Pakistan came into being, the British government’s India Act of 1935 was adopted as the working constitution. And it was the Quaid-i-Azam himself who introduced certain amendments to the act to make the governor-general the supreme authority. It was under these powers that the Quaid-i-Azam dismissed the government of Dr Khan Sahib in the NWFP in August 1947 and that of Mr Ayub Khuhro in Sindh in 1948.

Besides being governor-general, the Quaid-i-Azam also continued as president of the Muslim League and president of the Constituent Assembly.

It was these same powers under which Mr Daultana’s government was dismissed in Punjab in 1949 by Khawaja Nazimuddin, who himself was dismissed as prime minister in 1953 by Ghulam Mohammad.

However, in 1954, a move was started by members of the then Constituent Assembly to table an amendment to the act, taking away excessive powers of the governor-general. It was this move which provoked the governor-general, Ghulam Mohammad, to dismiss the Constituent Assembly in 1954, and thereby change the course of Pakistan’s history.

These are some of the myths that have been drummed into our heads from childhood and have become part of our consciousness. There are scores more, pervading our everyday life. And there are many unanswered questions such as:

• What is Pakistan’s ideology and when was the term first coined? (It was never heard of before 1907.)

• Why was Gandhi murdered? (He was supposedly guarding Pakistan’s interest.)

• What is the truth about the so-called traitors, Shaikh Mujeeb, Wali Khan, and G.M. Syed?

• What caused the break-away of East Pakistan?

• Why was Bhutto put to death?

• Are all our politicians corrupt and self-serving?

• Why does our history repeat itself after every 10 years?

The answers to all these questions require a thorough study of history, not mythology. But history unfortunately is a discipline that has never been taken seriously by anyone in our country. It’s time things changed. REFERENCE: The myth of history By Prof Shahida Kazi Posted: Mar 28, 2005 Mon 01:12 am [The Article had appeared in Daily Dawn in 2005] The myth of history By Prof Shahida Kazi March 27, 2005
Romila Thapar: India's past and present — how history informs contemporary narrative


In February 1899, British novelist and poet Rudyard Kipling wrote a poem entitled “The White Man’s Burden: The United States and The Philippine Islands.” In this poem, Kipling urged the U.S. to take up the “burden” of empire, as had Britain and other European nations. Published in the February, 1899 issue of McClure’s Magazine,The White Man’s Burden”: Kipling’s Hymn to U.S. Imperialism

Take up the White Man’s burden—

Send forth the best ye breed—

Go send your sons to exile

To serve your captives' need

To wait in heavy harness

On fluttered folk and wild—

Your new-caught, sullen peoples,

Half devil and half child

Take up the White Man’s burden

تاریخ کی دیو مالا ز پروفیسر شاہدہ قاضی

تاریخ ایک ایسا شعبہ تعلیم ہے جسے پاکستانیوں نے کبھی سنجیدگی سے نہیں لیا۔ نتیجہ یہ ہے کہ اس شعبے کو اس بری طرح مسخ کردیا گیا ہے کہ بہت سی گھڑی ہوئی کہانیاں ہمارے اجتماعی شعور کا حصہ بن گئی ہیں۔

کیا سچ میں دیومالا کا تاریخ سے کوئی تعلق ہے؟ کیا دیومالا اور تاریخ ایک ہی چیز کے دو نام ہیں؟ یا تاریخ ہی دیومالا ہے؟

بلاشک ان دونوں میں بہت نازک سا فرق ہے۔ زمانہ قبل از تاریخ سے ہی انسان ہمیشہ اپنی جڑوں کی تلاش میں رہا ہے۔ وہ عہد گزشتہ کے افسانوی کرداروں کے بارے میں حقیقی اور ٹھوس معلومات کی تلاش میں بھی رہا ہے، وہ کردار جو ہمارے اجتماعی شعور کا حصہ بن چکے ہیں۔ نتیجتًا ہم دیکھتے ہیں کہ کنگ آرتھر نامی کسی بادشاہ کی تاریخ میں موجودگی ثابت کرنے کی جستجو کی جاتی ہے، افسانوی شہر ٹرائے کی باقیات تلاش کی جاتی ہیں، اور نوح علیہ السلام کی کشتی کے رکنے کا مقام تلاش کرنے کے لیے کئی مہمات وضع کی جاتی ہیں۔

ساٹھ اور ستر کے عشروں میں عالمی سطح پر ایک تحریک چلائی گئی تاکہ دیومالائی داستانوں میں موجود ’خداؤں‘ کی موجودگی ثابت کی جائے؛ کہ وہ دوسری کہکشاؤں سے آئے تھے؛ اور یہ کہ انسانیت کی ساری ترقی ان اجنبی فوق البشر ہیروز کی مرہون منت ہے۔ اس موضوع پر کئی ایک کتابیں لکھی گئیں۔

ہم، یہاں پاکستان میں، الگ ہی مزاج کے حامل ہیں۔ دوسری قومیتوں کی طرح کوئی باقاعدہ دیو مالا نہیں تو کیا ہوا، ہم نے اپنی دیومالائی داستانیں بنا لیں، جن میں ایسے ایسے ہیروز کی یادیں ہیں جن کے ساتھ بے شمار کارنامے منسوب ہیں۔

لیکن فرق یہ ہے کہ ہمارے افسانوی ہیرو قبل از تاریخ اور بہت پرانے دور کے نہیں بلکہ ہمارے آج کے دور سے ہی تعلق رکھتے ہیں۔ ان ہیروز کے گرد بالکل حقیقی لگنے والی دیومالا کھڑی کی گئی ہے، ان کی شخصیت اور کارنامے، جو کہ ہمارے بچوں کے کانوں میں اس وقت سے انڈیلنا شروع کردئیے جاتے ہیں جیسے ہی وہ سکول جانے کے قابل ہوجائیں۔ یہ تلقین اتنی گہری ہوتی ہے کہ حقائق سے پردہ اٹھانے یا سچائی کا چہرہ دکھانے کی ہر کوشش کو ہرزہ سرائی سے کم پر محمول نہیں کیا جاتا۔

ذیل میں ایسی ہی کچھ بہت عام سی دیومالائیں موجود ہیں:

دیو مالا 1

ہماری تاریخ 712 عیسوی سے شروع ہوتی ہے جب محمد بن قاسم برصغیر میں آیا اور اس نے دیبل کی بندرگاہ کو فتح کیا۔

کسی بھی معاشرتی علوم یا معالعہ پاکستان کی کتاب کو اٹھا لیں،وہ محمد بن قاسم سے ہی شروع ہوتی ہے۔ اس کی آمد سے پہلے کیا تھا؟ جی ہاں، راجہ داہر جیسے ظالم و جابر ہندو حکمران اور پسی ہوئی غیر تہذیب یافتہ آبادی جو کسی ’نجات دہندہ‘ کی آمد کی شدت سے منتظر تھی تاکہ وہ انھیں ظالم حکمرانوں کے پنجوں سے نجات دلائے۔ اور جب نجات دہندہ آیا، تو اس کا کھلی باہنوں سے استقبال کیا گیا، اور شکرگزار لوگ جوق در جوق اسلام میں داخل ہوگئے۔

کیا ایسا ہی ہوا تھا؟ تاریخ کا یہ ورژن بڑی آسانی سے نظر انداز کر دیا جاتا ہے کہ وہ علاقہ جہاں ہمارا ملک واقع ہے کی بڑی شاندار 6000 سالہ تاریخ ہے۔ موہن جودڑو کو بھول جائیں۔ ہم ان کے بارے میں بہت زیادہ نہیں جانتے۔ لیکن معلومہ تاریخ ہمیں بتاتی ہے کہ محمد بن قاسم سے پہلے، اس علاقے میں، جو تقریبًا پنجاب، سندھ، سرحد پر مشتمل ہے پر کم سے کم بارہ مختلف بادشاہوں نے حکومت کی جو دینا کے مختلف حصوں سے تعلق رکھتے تھے، جیسے کہ خسرو سے داریوش تک کے ایرانی حکمران، یونانی جن میں بیکتیریائی، سچیانی، پارتھئین، چین سے کشانا، اور (اٹیلا کے خاندان سے تعلق رکھنے والے) ہُن جو چین سے ہی آئے تھے، یہ ان ہندو خاندانوں کے علاوہ تھے جن میں اشوک، چندر گپت اور موریا جیسے عظیم حکمران شامل ہیں۔

گندھارا کے دور میں اس علاقے کو دنیا کی سب سے بڑی اور اہم یونیورسٹی کا وطن ہونے کا اعزاز حاصل رہا، ہمارا شہر جسے ہم آج ٹیکسلا کہتے ہیں۔ ہم اعلٰی تہذیب یافتہ، پڑھے لکھے، آسودہ حال، تخلیقی اور معاشی طور پر زرخیز لوگ رہے ہیں، اور بہت سے ممالک نے ہم سے علمی اور معاشی دونوں طرح سے فیوض حاصل کیے۔ یہ ایسی چیز ہے جو ہمیں بھولنی نہیں چاہیے۔ لیکن کیا ہم اپنے بچوں کو یہ سب بتاتے ہیں؟ نہیں۔ چناچہ یہ دیو مالا نسل در نسل چلتی ہے۔

دیو مالا 2

محمد بن قاسم ہندوستان آیا تاکہ وہ مظلوم بیواؤں اور یتیم لڑکیوں کی مدد کرے۔

تاریخ سے ہماری خوش فہمانہ چشم پوشی کی وجہ سے ہم جانتے ہی نہیں یا جاننے کی کوشش ہی نہیں کرتے کہ وہ دور اسلامی سلطنت کو وسعت دینے کا دور تھا۔ عربوں نے دنیا کا بڑا حصہ فتح کرلیا تھا، جس میں پورا مشرق وسطی، فارس، شمالی افریقہ اور سپین شامل ہیں۔ چناچہ منطقی لحاظ سے یہ نہیں کہا جاسکتا کہ انھوں نے ہندوستان جیسے روائتی خزانوں کے ملک کو فتح کرنے کا نہ سوچا ہو۔

حقیت یہ ہے کہ عربوں نے ہندوستان کی طرف اپنی پہلی مہم حضرت عمرؓ کے دور میں بھیجی تھی۔ اسی کے تسلسل میں ایک مہم حضرت عثمانؓ کے دور میں مکران بھی آئی۔ لیکن وہ اس علاقے میں کوئی حکومت قائم کرنے میں ناکام رہے تھے۔ بعد میں راجہ کی جانب سے سمندری قذاقوں کے ہاتھوں اغوا شدہ بحری جہازوں (جو اتفاقًا عورتوں اور لڑکیوں کے ساتھ ساتھ سری لنکا کے خزانوں سے بھی بھرے ہوئے تھے) کا معاوضہ دینے سے انکار پر دو مہمات پہلے ہی ہندوستان روانہ کی جاچکی تھیں لیکن وہ بھی ناکام رہی تھیں۔ یہ تیسری مہم تھی جو محمد بن قاسم کی قیادت میں سندھ بھجی گئی اور کامیاب ہوئی جس کا مقصد منصورہ سے ملتان تک کے علاقے کو قبضے میں کرنا تھا۔ تاہم عربوں کی اندرونی رنجش اور سیاسی رسہ کشی کی وجہ سے سندھ عرب سلطنت کا نظراندازشدہ کنارہ بنا رہا، اور جلد ہی اس پر مقامی حکمران قابض ہوگئے۔

دیو مالا 3

بت شکن کی دیو مالا۔

محمود غزنوی، بیک وقت اسلام کا عظیم بیٹا اور عظیم بت شکن، نے پورے ہندوستان سے بت شکنی کا بیڑہ اٹھایا اور برصغیر میں اسلام کو پھیلا دیا۔

محمود، جو کہ قریبی ریاست غزنی وسط ایشیا سے آیا تھا، نے انڈیا پر کم از کم 17 بار حملہ کیا۔ لیکن پنجاب کے علاوہ اس نے ملک کے کسی اور حصے کو فتح کرنے یا ہندوستان کے دوسرے حصوں پر اپنا اقتدار مضبوط کرنے کی کوئی کوشش نہ کی۔ حقیقت یہ ہے کہ اسے صرف ہندوستان کے زر و جواہرات نے للچایا، سونا اور قیمتی پتھر، جن کا اس نے خیال کیا اور ہر بار اپنے حملے کے بعد ان کی اچھی خاصی مقدار اپنے ساتھ واپس لے کر گیا۔ ہندوستان کے مندر اس وقت زر و جواہر اور خزانوں کا مخزن تھے، جیسا کہ یورپ میں کلیسا کا کام تھا، چناچہ مندروں اور بتوں میں اس کی خصوصی توجہ کا مرکز یہی زر و جواہر تھے۔

عام عقیدے کے برعکس، نہ یہاں پرحکومت کرنے والے بادشاہوں، وسط ایشیا کے سلاطین جنہوں نے 300 سال حکومت کی، اور نہ ہی مغل جنہوں نے بعد کے 300 سال حکومت کی، نے یہاں اسلام متعارف کرایا۔ یہ کام ہندوستان آنے والے صوفی بزرگوں نے کیا جو اپنے وطن میں بنیاد پرستوں کی ایذارسانیوں سے تنگ آکر ہندوستان چلے آئے تھے، جن کے اعلٰی اخلاق ، انسانیت کے لیے محبت، دردمندی، رواداری اور سادہ طرز زندگی نے تمام مذاہب کے لوگوں کے دل جیت لیے۔

دیو مالا 4

ٹوپیاں سینے والے کی دیو مالا

برصغیر پر حکومت کرنے والے تمام بادشاہوں میں سے، جس کی تعریف ہماری کتابوں میں سب سے زیادہ کی جاتی ہے وہ اورنگزیب ہے، مغلوں کا آخری عظیم تاجدار۔ بابر نے سلطنت بنائی؛ ہمایوں نے گنوائی اور پھر واپس حاصل کی؛ اکبر نے اسے پھیلایا اور مستحکم کیا؛ جہانگیر اپنے عدل کی وجہ سے جانا جاتا تھا؛ اور شاہجہاں اپنی عظیم تعمیرات کی وجہ سے۔ لیکن اورنگزیب جسے ایک متقی انسان سمجھا جاتا ہے سب سے زیادہ توجہ کا مستحق ٹھہرتا ہے۔ پائی جانے والی دیومالا یہ ہے کہ وہ خزانے میں سے اپنے ذاتی خرچ کے لیے رقم نہیں لیتا تھا، بلکہ وہ اپنی ضروریات ٹوپیاں سی کر اور قرآن کی کتابت کرکے پوری کرتا تھا۔ کیا اس دعوے کو بار بار دوہرانے کی کوئی خاص ضرورت ہے؟ کوئی بھی جو مغلوں کے طرز زندگی سے تھوڑی سی واقفیت رکھتا ہے یہ جانتا ہوگا کہ درجنوں کے حساب سے محلات کو چلانے کا خرچ کتنا تھا۔ مغلوں کی کئی بیویاں، بچے، مصاحب، داشتائیں، اور غلام ہوا کرتے تھے جو کہ ہر محل میں ہوا کرتے ہونگے اور جن کی ضروریات بھی پوری کرنا ہوتی ہونگی۔ کیا ایسے اخراجات ٹوپیاں سینے سے پورے ہوسکتے تھے؟ اور اگر بادشاہ ٹوپیاں سیتا بھی تھا تو کیا لوگ انھیں خریدتے تھے اور عام ٹوپیوں کی طرح پہنتے تھے؟ کیا وہ ان کے لیے بہت زیادہ رقم خرچ نہیں کرتے ہونگے اور بطور مقدس ورثہ نہیں سنبھالتے ہونگے؟ کیا ایک بادشاہ، جس کی نظر اپنے اردگرد موجود جنگی خطروں اور ایک عظیم سلطنت کو محفوظ اور مستحکم رکھنے پر رہتی تھی، کے پاس اتنا وقت ہوگا کہ وہ آرام سے بیٹھ کر ٹوپیاں سی سکے؟ یہ نہ بھولیے کہ وہ شخص جسے ہم متقی مسلمان کہہ رہے ہیں اپنے ہی باپ کو اپنے محل کی ایک کوٹھڑی میں قید کرکے اور اپنے بھائیوں قتل کرکے برسر اقتدار آیا تھا تاکہ وہ اس کے اقتدار کے لیے خطرہ نہ بن سکیں۔

دیو مالا 5

یہ مسلمان تھے جو 1857 کی جنگ کے ذمہ دار ہیں؛ اور یہ مسلمان ہی تھے جنہوں نے جنگ کے بعد ایذارسانیاں اور تکلیفیں برداشت کیں، جبکہ ہندو انگریزوں کے قدرتی اتحادی تھے۔

یہ سچ ہے کہ ہندوؤں کی نسبت زیادہ مسلمان رجمنٹوں نے 1857 میں علم بغاوت بلند کیا۔ لیکن ہندؤں نے بھی لڑائی میں اہم کردار ادا کیا (جھانسی کی رانی اس کی بہترین مثال ہے)؛ نیز اگرمسلمان فوجی اس افواہ پر برافروختہ ہوگئے تھے کہ کارتوسوں کا سرا خنزیر کی چربی سے بنا ہے تو ہندو بھی اس افواہ پر کہ کارتوس کا سرا گائے کی چربی سے بنا ہے پر آپے سے باہر ہوگئے تھے۔ اور مسلمانوں کی بڑی اکثریت انگریزوں کے ساتھ آخر تک وفادار بھی رہی۔ (ان میں سب سے زیادہ مشہور سرسید احمد خان ہیں۔)

مزید یہ کہ مسلمانوں نے 1857 کے بعد اپنی سلطنت نہیں کھوئی تھی۔ انگریز اس سے پہلے ہی ہندوستان کے بہت سے علاقے کے آقا بن بیٹھے تھے، مسلمان اور ہندو حکمرانوں سے حیلے بازی اور فریب کاری سے بہت سا علاقہ ہتھیا چکے تھے۔

اس وقت مغل بادشاہ کی موجودگی برائے نام ہی تھی؛ اس کی عمل داری دہلی سے باہر نہیں تھی۔ 1857 کے بعد ہندوؤں نے تیزی سے ترقی کی، چونکہ وہ جدید تعلیم حاصل کرنے، انگریزی زبان سیکھنے، اور کامرس و تجارت میں آگے بڑھنے میں تیز نکلے۔ مسلمان صرف جاگیر دار تھے، ماضی کی عظمت اور شان و شوکت کے خوابوں سے بندھے ہوئے، اور جب ان کی جاگیریں ضبط کرلی گئیں تو ان کے پاس کچھ بھی نہ رہا؛ ان کی درس نظامی کی تعلیم اور فارسی میں مہارت ان کے کچھ کام نہ آسکی۔ یہ حقیقت ہے کہ یہ سب بدلتے ہوئے زمانے کے ساتھ بدلنے میں رکاوٹ تھا۔

دیو مالا 6

مسلمان انگریزوں کے خلاف جدوجہد میں سب سے آگے تھے اور بعد میں ان سے خصوصًا ناانصافی پر مشتمل سلوک کیا گیا۔

بالکل بھی نہیں۔ بلکہ حقیقت یہ ہے کہ مسلمانوں کو پہلا ’تحفہ‘ انگریزوں نے 1905 میں بنگال کی تقسیم کی شکل میں دیا (جسے 1911 میں واپس لے لیا گیا) 1906 کے شملہ وفد کو صحیح طور پر ’حکمیہ کارکردگی‘ کا حامل کہا جاتا ہے؛ مسلمانوں کو ان کے رہنماؤں کے مطالبے پر وائسرائے نے بلا تاخیر جداگانہ انتخاب اور رائے دہندگی کا یقین دلایا۔ اس کے بعد مسلم لیگ وجود میں آئی، جسے انگریزوں سے قرب رکھنے والے رہنماؤں جیسے آغا خان، جسٹس امیر علی، کچھ دوسرے نوابین اور جاگیر داروں نے قائم کیا۔ اور مسلم لیگ کے منشور کا پہلا مقصد کچھ یوں ہے:”برطانوی حکومت کے بارے میں وفادارانہ خیالات کو فروغ دیا جائے۔”

مسلم لیگ نے برطانیہ عظمی کے خلاف کبھی بھی تحریک نہ چلائی۔ اکلوتا موقع جب مسلمانوں نے تحریک چلائی 20 کے عشرے کی تحریک خلافت تھی جس کی قیادت علی برادران اور دوسرے بچے کھچے رہنماؤں نے کی۔ مسلم لیگ کا ایک بھی رہنما، قائد اعظم سمیت، کبھی بھی جیل نہیں گیا۔ یہ کانگرس تھی جس نے برطانیہ مخالف عدم تشدد اور عدم تعاون پر مشتمل تحریک 30 اور 40 کے عشرے میں جاری رکھی جس میں مشہور زمانہ ’ہندوستان چھوڑ دو‘ تحریک بھی شامل ہے، جبکہ مسلم لیگی رہنماؤں نے ان تحریکوں کی مذمت کرنے اور اپنے پیروؤں کو ان میں حصہ لینے سے روکنا جاری رکھا۔

دیو مالا 7

صرف مسلم لیگ ہی مسلمانوں کی نمائندہ جماعت تھی۔

یہ ناقابل تردید حقیقت ہے کہ1940 کے بعد مسلم لیگ نے مسلمانوں میں مقبول ترین جماعت کے طور پر اپنا تشخص قائم کرلیا۔ لیکن اس سے پہلے، 1937 کے انتخابات سے یہ ثابت ہے کہ مسلم لیگ کسی بھی مسلم اکثریت والے صوبے میں حکومت نہیں بنا سکی تھی۔ ان انتخابات میں، 482 مسلم نشستوں میں سے مسلم لیگ کو صرف 103 ملی تھیں (جو کہ کل میزان کے ایک چوتھائی سے بھی کم ہے۔) دوسری نشستیں یا تو کانگریس کے مسلمانوں کو مل گئیں، یا پھر دوسری قوم پرست جماعتوں جیسے پنجاب یوننیسٹ پارٹی، سندھ یونینسٹ پارٹی اور بنگال کریشک پوجا پارٹی کو چلی گئی تھیں۔

دیو مالا 8

علامہ اقبال پہلے انسان تھے جنہوں نے الگ مسلم ریاست کا خیال پیش کیا۔

یہ ان گہری راسخ شدہ دیومالاؤں میں سے ہے جن کا پروپیگنڈہ ہر حکومت نے کیا۔ حقیقت میں، شمال مغربی علاقے کے مسلم اکثریتی صوبے ایک قدرتی گروپ بناتے ہیں اور انھیں ایک اکائی تصور کیا جانا چاہیے کا خیال 1858 سے برطانویوں کے ہاں زیر بحث تھا اور اسے مختلف سیاسی پلیٹ فارمز اور اخباری مضامین میں بھی اکثر زیر بحث لایا گیا۔ اس تصور کی مختلف صورتیں اہم عوامی شخصیات نے پیش کیں، جن میں برطانوی، ہندو اور مسلمان سب شامل ہیں۔ جب علامہ اقبال نے اپنا 1930 کا مشہور خطبہ پیش کیا، اس وقت تک کم از کم 64 بار یہ تصور پیش کیا جاچکا تھا۔ چناچہ اقبال نے جو کچھ کہا وہ پہلے ہی سے موجود تھا، اور یہ کوئی طبع زاد ’خواب‘ نہ تھا۔ ان کے الہ آباد کے خطبے کی اشاعت کے بعد، علامہ اقبال نے ایک برطانوی اخبار میں ایک ’تردید‘ شائع کروائی کہ ان کا مقصد الگ مسلم ریاست کا مطالبہ نہیں تھا، بلکہ ان کی مراد ہندوستان کے وفاق میں رہتے ہوئے ایک مسلم بلاک سے تھی۔

دیو مالا 9

قراردادِ پاکستان نے ایک متحدہ مسلم ریاست کا تصور پیش کیا۔

حقیقت یہ ہے کہ مسلم بلاک کے بارے میں پیش کردہ مختلف تصورات میں ،جو انفرادی اور اجتماعی طور پر پیش ہوئے، مشرقی بنگال شامل نہیں تھا۔ ہمیشہ شمال مشرقی صوبوں پر زور دیا جاتا رہا، جن کی سرحدیں مشترک تھیں جبکہ دوسری مسلم اکثریتی ریاستوں جیسے بنگال اور حیدرآباد دکن کو الگ بلاک خیال کیا جاتا تھا۔ چناچہ یہ تھی قراردادِ پاکستان۔ جس کے مطابق: “علاقے جہاں مسلمان عددی اکثریت میں ہیں جیسا کہ ہندوستان کے شمال مغربی اور مشرقی علاقے، کو آزاد ریاستوں میں بدل دینا چاہیے، جہاں متعلقہ اکائیاں خودمُختار اور حکومت سازی میں آزاد ہوں۔

پوری قرارداد کے ادنی اور مبہم مسودے کو پرے رکھتے ہوئے، ریاستوں (جو کہ جمع ہے) والا حصہ بالکل واضح ہے۔ یہ صرف 1946 میں، مسلم لیگ کے نمائندوں کے اجلاس منعقدہ دہلی میں ہوا کہ قرارداد میں ترمیم کی گئی اور اسے مسلم لیگ کے ایک عمومی اجلاس میں اپنا لیا گیا اور مقصد ایک متحدہ ریاست کا قیام قرار پایا۔

دیو مالا 10

23 مارچ 1940 اس لیے منایا جاتا ہے کہ قراردادِ پاکستان کو اس دن نصب العین قرار دیا گیا۔ حقیقت حال یہ ہے کہ قراردادِ پاکستان 23 مارچ کو صرف پیش کی گئی تھی جبکہ اس کو منظور اور اپنایا 24 مارچ کو گیا تھا ( جو کہ اس اجلاس کی دوسری اور حتمی نشست تھی)۔

یہ ایک الگ کہانی ہے کہ ہم 23 مارچ کیوں مناتے ہیں۔ یہ دن 1956 سے پہلی کبھی نہیں منایا گیا۔ اس سال یہ پہلی بار یوم جمہوریہ کے طور پر منایا گیا تھا چونکہ ہمارا پہلا آئین منظور ہوا تھا اور پاکستان ایک حقیقی آزاد جمہوریہ بنا تھا۔ ہمارے لیے اس کی اہمیت ایسے ہی ہے جیسے ہندوستان کے لیے 26 جنوری کی۔ لیکن جب جنرل ایوب خان نے 1958 میں آئین منسوخ کرکے مارشل لاء نافذ کیا تو اسے اس دُبدھا کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ ملک کو ایک ایسا دن نہیں منانے دے سکتا تھا جو اس آئین کی یادگار تھا جس کی اس نے خود دھجیاں اڑائی تھیں، اور نہ ہی وہ اس جشن کو روک سکتا تھا۔ چناچہ حل یہ نکالا گیا کہ جشن کو جاری رکھا گیا، لیکن اس کا نام بدل دیا گیا: قراردادِ پاکستان کا دن۔

دیو مالا 11

یہ غلام محمد تھا جس نے وزیر اعظم اور ریاست کے سربراہ کے مابین اختیارات کا عدم توازن پیدا کیا، اور وہی گورنر جنرل کی فوقیت کو وزیراعظم اور پارلیمنٹ پر مسلط کرنا چاہتا تھا۔

جب پاکستان وجود میں آیا تو ابتدا میں برطانوی حکومت کا 1935 کا ہندوستانی حکومت کا ایکٹ بطور عبوری آئین اپنایا گیا۔ اور قائداعظم نے بذات خود اس ایکٹ میں ایسی ترامیم متعارف کروائیں جس کی وجہ سے گورنر جنرل بالادست اور مقتدر ہوگیا۔ انھی اختیارات کی رو سے قائد اعظم نے اگست 1947 میں سرحد میں ڈاکٹر خان صاحب کی حکومت اور 1948 میں سندھ میں مسٹر ایوب کھوسو کی حکومت کو برطرف کیا۔

گورنر جنرل رہنے کے ساتھ ساتھ قائد اعظم مسلم لیگ کے صدر اور قانون ساز اسمبلی کے صدر بھی رہے۔

یہی اختیارات تھے جن کے تحت پنجاب میں 1949 میں مسٹر دولتانہ کی حکومت کو خواجہ ناظم الدین نے برطرف کیا، جن کی حکومت کو 1953 میں غلام محمد نے برطرف کیا تھا۔

تاہم 1954 میں اس وقت کی قانون ساز اسمبلی کے اراکین کی طرف سے ایک تحریک چلائی گئی تاکہ ایکٹ میں ترامیم کرکے گورنر جنرل سے اضافی اختیارات واپس لے لیے جائیں۔ اسی تحریک نے گورنر جنرل غلام محمد کو مشتعل کیا اور اس نے قانون ساز اسمبلی 1954 میں توڑ دی، اور پاکستان کی تاریخ کا دھارا بدل ڈالا۔

یہ کچھ دیومالائی داستانیں ہیں جنہیں بچپن سے ہی ہمارے کانوں میں انڈیلا جاتا ہے اور جو ہمارے شعور کا حصہ بن جاتی ہیں۔ ایسے بے شمار اور افسانے ہماری روزمرہ کی زندگی میں سرایت کیے ہوئے ہیں۔ اور یہاں بہت سے سوالات ہیں جن کے جواب موجود نہیں جیسے:

• نظریہ پاکستان کیا ہے اور یہ اصطلاح سب سے پہلے کب ایجاد ہوئی؟ (یہ 1907 سے پہلے کبھی نہیں سنی گئی۔)

گاندھی کا قتل کیوں کیا گیا؟

(چونکہ وہ شاید پاکستان کے مفادات کا تحفظ کررہا تھا۔)

• نام نہاد باغیوں شیخ مجیب، ولی خان، اور جی ایم سید کی حقیقت کیا ہے؟

• سقوط مشرقی پاکستانی کی وجہ کیا تھی؟

• بھٹو کو کیوں موت کے حوالے کیا گیا؟

• کیا تمام سیاستدان کرپٹ اور مفادپرست ہیں؟

•ہماری تاریخ ہر 10 سال بعد اپنے آپ کو کیوں دوہراتی ہے؟

ان تمام سوالات کے جوابات دیو مالا کی بجائے تاریخ کے مکمل مطالعے کے متقاضی ہیں۔ لیکن بدقسمتی سے تاریخ ایک ایسا شعبہ تعلیم ہے جسے ہمارے ملک میں کبھی بھی سنجیدگی سے نہیں لیا گیا۔ یہ وقت ہے کہ چیزوں کو بدلا جائے۔

Courtesy: Mr Awais Masood


Zak said...

Salaam Alaikum,

Came to your blog searching for Imam Jafer As Saadiq's Ilm-e-Jafar tips.

Started reading other articles and I have to say, all of them are excellent - which in this case means erudite, comprehensive and above all eye opening.

May Allah grant you and your qalm more power and hopefully these articles see more light of day.

Am a reident of Hyderabad, India.


Aamir Mughal said...


Thanks, for visiting my humble blog and thank you very much for your ardent prayers for me. May Allah Bless you and your family.