Friday, August 5, 2011

GEO TV (Jang Group) Promotes "Bida'at (Innovation)" of Sufism.

The Prophet Mohammad (PBUH), has said: "If anyone introduces into this affair of ours (i.e. the religion of Islam) anything which does not belong to it, he will have it rejected." [Reported by Muslim - Sahih]. The Prophet Mohammad (PBUH), has said: "Whoever does an action which we (Allah and His Messenger) have not commanded it will be rejected." [Reported by Muslim - Sahih] - The Prophet Mohammad (PBUH), has said "If somebody innovates something which is not in harmony with the principles of our religion, that thing is rejected." [Bukhari]

50 minute With Abdul Rauf by Geo News -- 5th August 2011 - Part 1/3


The word “Sufism” was not known at the time of the Messenger or the Sahaabah (companions) or the Taabi’een (Companions of the Companions of the Prophet). It arose at the time when a group of ascetics who wore wool (“soof”) emerged, and this name was given to them. It was also said that the name was taken from the word “soofiya” (“sophia”) which means “wisdom” in Greek. The word is not derived from al-safa’ (“purity”) as some of them claim, because the adjective derived from safa’ is safaa’i, not soofi (sufi). The emergence of this new name and the group to whom it is applied exacerbated the divisions among Muslims.

The early Sufis differed from the later Sufis who spread bid’ah (innovation) to a greater extent and made shirk in both minor and major forms commonplace among the people, as well as the innovations against which the Messenger (peace and blessings of Allaah be upon him) warned us when he said, “Beware of newly-invented things, for every newly-invented thing is an innovation and every innovation is a going-astray.” (Reported by al-Tirmidhi, who said it is saheeh hasan).

The following is a comparison between the beliefs and rituals of Sufism and Islam which is based on the Qur’aan and Sunnah.

Sufism has numerous branches or tareeqahs, such as the Naqshbandiya, Qaadriya, Chhishtiya, Saharvardiya, Shaadhiliyyah, Rifaa’iyyah, Rehmaaniya, Rizviya, Subhaniya, Gausiya, Teejaaniyah, Sanusiyyah, Sahiliyyah etc. the followers of which all claim that their particular tareeqah is on the path of truth whilst the others are following falsehood. Islam forbids such sectarianism. Allaah says (interpretation of the meaning):“… and be not of al-mushrikoon (the disbelievers in the Oneness of Allaah, polytheists, idolaters, etc), of those who split up their religion (i.e., who left the true Islamic monotheism), and became sects, [i.e., they invented new things in the religion (bid’ah) and followed their vain desires], each sect rejoicing in that which is with it.” [al-Room 30:31-32]

The Sufis worship others than Allaah, such as Prophets and “awliya’” [“saints”], living or dead. They say, “Yaa Jeelaani”, “Yaa Rifaa’i” [calling on their awliya’], or “O Messenger of Allaah, help and save” or “O Messenger of Allaah, our dependence is on you”, etc.But Allaah forbids us to call on anyone except Him in matters that are beyond the person's capabilities. If a person does this, Allaah will count him as a mushrik, as He says (interpretation of the meaning):

“And invoke not, besides Allaah, any that will neither profit you, nor hurt you, but if (in case) you did so, you shall certainly be one of the zaalimoon (polytheists and wrongdoers).” [Yoonus 10:106]The Sufis believe that there are abdaal, aqtaab and awliya’ (kinds of “saints”) to whom Allaah has given the power to run the affairs of the universe. Allaah tells us about the mushrikeen (interpretation of the meaning): “Say [O Muhammad]: ‘…And who disposes the affairs?’ They will say. ‘Allaah.’…” [Yoonus 10:31]The mushrik Arabs knew more about Allaah than these Sufis!

The Sufis turn to other than Allaah when calamity strikes, but Allaah says (interpretation of the meaning):

“And if Allaah touches you with harm, none can remove it but He, and if He touches you with good, then He is Able to do all things.” [al-An’aam 6:17]

Some Sufis believe in wahdat al-wujood (unity of existence). They do not have the idea of a Creator and His creation, instead they say that everything is creation and everything is god.

The Sufis advocate extreme asceticism in this life and do not believe in taking the necessary means or in jihaad, but Allaah says (interpretation of the meaning):

“But seek with that (wealth) which Allaah has bestowed on you, the home of the Hereafter, and forget not your portion of legal enjoyment in this world…” [al-Qasas 28:77]

“And make ready against them all that you can of power…” [al-Anfaal 8:60]

The Sufis refer the idea of ihsaan to their shaykhs and tell their followers to have a picture of their shaykh in mind when they remember Allaah and even when they are praying. Some of them even put a picture of their shaykh in front of them when they are praying. The Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Ihsaan is when you worship Allaah as if you can see Him, and although you cannot see Him, He can see you.” (Reported by Muslim).

The Sufis allow dancing, drums and musical instruments, and raising the voice when making dhikr, but Allaah says (interpretation of the meaning):

“The believers are only those who, when Allaah is mentioned, feel a fear in their hearts…” [al-Anfaal 8:2]

Moreover, you see some of them making dhikr by only pronouncing the Name of Allaah, saying, “Allaah, Allaah, Allaah.” This is bid’ah and has no meaning in Islam. They even go to the extreme of saying, “Ah, ah” or “Hu, Hu.” The Sunnah is for the Muslim to remember his Lord in words that have a true meaning for which he will be rewarded, such as saying Subhaan Allaah wa Alhamdulillah wa Laa ilaaha illa Allaah wa Allaahu akbar, and so on.

The Sufis recite love poems mentioning the names of women and boys in their dhikr gatherings, and they repeat words such as “love”, “passion”, “desire” and so on, as if they are in a gathering where people dance and drink wine and clap and shout. All of this has to do with the customs and acts of worship of the mushrikeen. Allaah says (interpretation of the meaning): “Their salaah (prayer) at the House (of Allaah, i.e., the Ka’bah at Makkah) was nothing but whistling and clapping of hands…”[al-Anfaal 8:35]

Some Sufis pierce themselves with rods of iron, saying, “O my grandfather!” So the shayaateen come to them and help them, because they are seeking the help of someone other than Allaah . Allaah says (interpretation of the meaning): “And whosoever turns away (blinds himself) from the remembrance of the Most Beneficent (Allaah), We appoint for him a shaytaan (devil) to be a qareen (intimate companion) for him.” [al-Zukhruf 43:36]

The Sufis claim to have gnosis and knowledge of the unseen, but the Qur’aan shows them to be liars. Allaah says (interpretation of the meaning): “Say: ‘None in the heavens and the earth knows the ghayb (unseen) except Allaah…’” [al-Naml 27:65]

The Sufis claim that Allaah created the world for the sake of Muhammad (peace and blessings of Allaah be upon him), but the Qur’aan shows them to be liars. Allaah says (interpretation of the meaning): “And I (Allaah) created not the jinns and humans except they should worship Me (Alone).” [al-Dhaariyaat 51:56]Allaah, may He be glorified and exalted, addressed His Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) with the words (interpretation of the meaning):

“And worship your Lord until there comes unto the certainty (i.e., death).” [al-Hijr 15:99]

The Sufis claim that they can see Allaah in this life, but the Qur’aan shows them to be liars. Allaah says (interpretation of the meaning):“[Moosa said:] ‘O my Lord! Show me (Yourself), that I may look upon You.’ Allaah said, ‘You cannot see Me…’” [al-A’raaf 7:143]

The Sufis claim that they take knowledge directly from Allaah, without the mediation of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) and in a conscious state (as opposed to dreams). So are they better than the Sahaabah??

The Sufis claim that they take knowledge directly from Allaah, without the mediation of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him). They say, “Haddathani qalbi ‘an Rabbi (My heart told me from my Lord).”

The Sufis celebrate Mawlid and hold gatherings for sending blessings on the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him), but they go against his teachings by raising their voices in dhikr and anaasheed (religious songs) and qaseedahs (poems) that contain blatant shirk. Did the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) celebrate his birthday? Did Abu Bakr, ‘Umar, ‘Uthman, ‘Ali, the four imaams or anyone else celebrate his birthday? Who knows more and is more correct in worship, the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) and the Salaf, or the Sufis?

The Sufis travel to visit graves and seek blessings from their occupants or to make tawaaf (ritual circumambulation) around them or to make sacrifices at these sites, all of which goes against the teachings of the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him): “Do not travel to visit any place but three mosques: al-Masjid al-Haraam [in Makkah], this mosque of mine [in Madeenah] and al-Masjid al-Aqsa [in Jerusalem].” (Agreed upon).

The Sufis are blindly loyal to their shaykhs, even when what they go against the words of Allaah and His Messenger. But Allaah, may He be exalted, says (interpretation of the meaning):

“O you who believe! Do not put (yourselves) forward before Allaah and His Messenger…” [al-Hujuraat 49:1]

The Sufis use talismans, letters and numbers for making decisions and for making amulets and charms and so on.

The Sufis do not restrict themselves to the specific blessings on the Prophet (peace and blessings of Allaah be upon him) that were narrated from him. They invented new formulas that involve seeking his blessings and other kinds of blatant shirk which are unacceptable to the one on whom they are sending blessings.

With regard to the question of the whether the Sufi shaykhs have some kind of contact, this is true, but their contact is with the shayaateen, not with Allaah, so they inspire one another with adorned speech as a delusion (or by way of deception), as Allaah says (interpretation of the meaning):

“And so We have appointed for every Prophet enemies – shayaateen (devils) among mankind and jinns, inspiring one another with adorned speech as a delusion (or by way of deception). If your Lord had so willed, they would not have done it…” [al-An’aam 6:112]

And Allaah says (interpretation of the meaning):

“… And, certainly, the shayaateen (devils) do inspire their friends (from mankind)…” [al-An’aam 6:121]

“Shall I inform you (O people!) upon whom the shayaateen (devils) descend? They descend on every lying, sinful person.” [al-Shu’ara 221-222]

This is the contact that is real, not the contact that they falsely claim to have with Allaah. Exalted be Allaah far above that. (See Mu’jam al-Bida’, 346 –359).

When some of these Sufi shaykhs disappear suddenly from the sight of their followers, this is the result of their contact with the shayaateen, who may even carry them to a distant place and bring them back in the same day or night, to mislead their human followers.

So the important rule here is not to judge people by the extraordinary feats that they may do. We should judge them by how closely or otherwise they adhere to the Qur’aan and Sunnah. The true friends of Allaah (awliya’) are not necessarily known for performing astounding feats. On the contrary, they are the ones who worship Allaah in the manner that He has prescribed, and not by doing acts of bid’ah.

The true awliya’ or friends of Allaah are those whom our Lord has described in the hadeeth qudsi narrated by al-Bukhaari in his Saheeh (5/2384) from Abu Hurayrah, who said: The Messenger of Allaah (peace and blessings of Allaah be upon him) said: “Allaah said, ‘Whoever shows enmity towards a friend (wali) of Mine, I declare war against him. My slave does not draw close to Me with anything more loved by Me than the religious duties that I have enjoined on him, and My slave continues to draw close to Me with supererogatory (naafil) acts, so that I will love him. When I love him, I am his hearing with which he hears, his seeing with which he sees, his hand with which he strikes and his foot with which he walks. Were he to ask [something] of Me, I would surely give it to him, and were he to ask Me for refuge, I would surely grant him it.’”

And Allaah is the Source of Strength and the Guide to the Straight Path. REFERENCE: Tassawuf OR Sufism Sheikh Muhammed Salih Al-Munajjid

50 minute With Abdul Rauf by Geo News -- 5th August 2011 - Part 2/3


نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام رضی اللہ تعالی عنہم اور تابعین عظام رحمہم اللہ کے دور میں صوفیت نام کی کوئ چيز نہیں پائ جاتی تھی ، حتی کہ زاھد لوگوں کا ایک گروہ پیدا ہوا جو کہ اون کے موٹے کپڑے پہنا کرتے تھے تو انہیں صوفی کے نام سے پکارا جانے لگا۔

اور یہ بھی کہا جاتا ہے کہ یہ (صوفی ) صوفیا سے ماخوذ ہے اور یونانی زبان میں اس کا معنی " حکمت " ہے نہ کہ جیسا کہ بعض یہ دعوی کرتے ہیں کہ یہ الصفاء سے ماخوذ ہے ، کیونکہ اگر الصفاء کی طرف نسبت کی جاۓ تو صفائ کہا جاۓ گا نہ کہ صوفی ۔

اس نۓ نام اور اس فرقہ نے مسلمانوں میں تفرقہ اور زیاد ہ کردیا ہے ، اور اس فرقہ کے پہلے صوفی حضرات بعد میں آنے والوں سے مختلف ہیں بعد میں آنےوالوں کے اندر بدعات کا بہت زیادہ عمل دخل ہے اور اس کے ساتھ ساتھ شرک اصغر اور شرک اکبر بھی پیدا ہو چکا ہے ، ان کی بدعات ایسی ہیں جن سے ہمارے نبی صلی اللہ علیہ و سلم نے بچنے کا حکم دیتے ہوۓ فرمایا :

( تم نۓ نۓ کا موں سے بچو کیونکہ ہر نیا کام بدعت اور ہر بدعت گمراہی ہے ) سنن ترمذی ، امام ترمذی نے اسے حسن صحیح کہاہے۔

ذیل میں ہم صوفیوں کے اعتقادات اور ان کے دینی طریقوں اور قرآن وسنت پر مبنی اسلا م کا مقارنہ اور موازنہ پیش کرتے ہیں :

صوفی حضرات : کے مختلف طریقے اور سلسلے ہیں ، مثلا تیجانیہ ، نقشبندیہ ، شاذلیہ ، قادریہ ، رفاعیہ ،اور اس کے علاوہ دوسرے سلسلے جن پر چلنے والے یہ دعوی کرتے ہیں کہ وہ ہی حق پر ہیں ان کے علاوہ کو‎ئ اور حق پر نہیں ، حالانکہ اسلام تفرقہ بازی سے منع کرتا ہے ، اسی کی طرف اشارہ کرتے ہوۓ اللہ تعالی نے فرمایا ہے :

{ اور تم مشرکوں میں سے نہ بنو ان لوگوں میں سے جنہوں نے اپنے دین کو ٹکڑے ٹکڑے کر دیا اور خود بھی گروہ گروہ ہو گۓ ، ہر گروہ اس چيز پر جو اس کے پاس ہے وہ اس میں مگن اور اس پر خوش ہے } الروم ( 31- 32 )

صوفی حضرات : نے اللہ تعالی کے علاوہ انبیاء اور اولیاء زندہ اور مردہ کی عبادت کرنی شروع کردی ، اور وہ انہیں پکارتے ہوۓ اس طرح کہتے ہیں ( یا جیلانی ، یا رفاعی ، یا رسول اللہ مدد ، اور یہ بھی کہتے ہیں ، یا رسول اللہ آپ پر ہی بھروسہ ہے ) ۔

اور اللہ تبارک وتعالی اس سے منع فرماتا ہے کہ اس کے علاوہ کسی اور کو ایسی چیز میں پکارا جاۓ جس پر وہ قادر نہیں بلکہ یہ اسے شرک شمار کیا ہے ۔

جیسا کہ اللہ تعالی کا فرمان ہے :

{ اور اللہ تعالی کو چھوڑ کر ایسی چیز کی عبادت مت کرو جو آپ کو کوئ نفع نہ دے سکے اور نہ ہی کوئ نقصان اور ضرر پنچا سکے ، پھر اگر آپ نے ایسا کیا تو تم اس حالت میں ظلم کرنے والوں میں سے ہو جاؤ گے } یونس ( 106 )

اور صوفی حضرات : کا یہ اعتقاد ہے کہ کچھ قطب اور ابدال اور اولیاء ہیں جنہیں اللہ تعالی نے معاملات اور کچھ امور سپرد کۓ ہیں جن میں وہ تصرف کر تے ہيں ۔

اوراللہ تعالی نےتو مشرکوں کے جواب کوبیان کرتے ہوۓ یہ فرمایاہے :

{ اور معاملات کی تدبیر کون کرتا ہے ؟ تو وہ ضرور یہ کہیں گے کہ اللہ تعالی ہی کرتا ہے } یونس ( 31 )

تو مشرکین عرب کو ان صوفیوں سے اللہ تعالی کی زیادہ معرفت تھی ۔

اورصوفی حضرات مصائب میں غیراللہ کی طرف جاتے اور ان سے مدد طلب کرتے ہیں ۔

لیکن اللہ تبارک وتعالی کا فرمان ہے :

{ اوراگر اللہ تعالی تجھے کوئ تکلیف پہنچاۓ تو اللہ تعالی کے علاوہ کوئ بھی اسےدور کرنے والا نہیں ، اور اگرتجھے اللہ تعالی کوئ نفع دینا چاہے تو وہ ہر چیز پر قادر ہے } الانعام ( 17 )

بعض صوفی حضرات وحدۃ الوجود کا عقیدہ رکھتے ہیں ، تو ان کے ہان خالق اور مخلوق نہیں بلکہ سب مخلوق اور سب الہ ہیں ۔

صوفی حضرات : زندگی میں زھد اور اسباب کو حاصل نہ کرنے اور جھاد کو ترک کرنے کی دعوت دیتے ہیں ۔

لیکن اللہ تبارک وتعالی کافرمان ہے :

{ اور جوکچھ اللہ تعالی نے آپ کودے رکھاہے اس میں آخرت کے گھر کی بھی تلاش رکھ ، اور اپنے دنیوی حصے کو نہ بھول } القصص (77 ) اور اللہ رب العزت کا فرمان ہے : { اور تم ان کے مقابلے کے لۓ اپنی طاقت کے مطابق قوت تیار کرو } الانفال ( 60 )

صوفی حضرات : اپنے مشائخ کو احسان کے درجہ پر فائز کرتے ہیں اور اپنے مریدوں سے ان کا مطالبہ ہوتا ہے کہ وہ اللہ تعالی کا ذکر کرتے وقت اپنے شیخ کا تصور کریں حتی کہ نماز میں بھی شیخ کا تصور ہونا چاہۓ ، حتی کہ ان میں سے بعض تونما ز پڑہتے وقت شیخ تصویر اپنے آگے رکھتے تھے ۔

حالانکہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے : ( احسان یہ ہے کہ عبادت ایسے کرو گویا کہ اللہ تعالی کو دیکھ رہے ہو، اگر آپ اللہ تعالی کونہیں دیکھ رہے تو اللہ تعالی تمہیں دیکھ رہا ہے ) صحیح مسلم ۔

صوفی حضرات : رقص وسرور اور گانے بجانے اور موسیقی اور اونچی آواز سے ذکرکو جائز قرار دیتے ہیں ۔

اور اللہ تعالی کا فرمان تو یہ ہے کہ :

{ ایمان والے تو ایسے ہوتے ہیں کہ جب اللہ تعالی کا ذکر کیا آتا ہے تو ان کے دل دھل جاتے ہیں } الانفال ( 3 )

پھر آپ ان کو دیکھیں گے وہ صرف لفظ جلالہ ( اللہ اللہ اللہ ) کا ذکر کرتے ہیں جو کہ بدعت اور ایسی کلام ہے جو کہ شرعی معنی کے لحاظ سے غیر مفید ہے ، بلکہ وہ تو اس حد تک چلے جاتے ہیں کہ صرف ( اھ ، اھ ) اور یا پھر ( ہو ، ہو ، ہو ) کرنا شروع کردیتے ہیں ۔

اور اسلام مصادر کتاب وسنت میں تو یہ ہے کہ بندہ رب ایسے کلام سے یاد اور اس کا ذکر کرے جو کہ صحیح اور مفید ہو جس پر اسے اجروثواب سے نوازا جاۓ ، مثلا سبحان اللہ ، الحمد للہ ، لاالہ الا اللہ ، اللہ اکبر ، اوراس طرح کے دوسرے اذکار ۔

صوفی حضرات : مجالس ذکر میں عورتوں اور بچوں کے نام سے غزلیں اور اشعار گاتے اور پڑھتے ہیں اور اس میں باربار عشق و محبت اور خواہشات کی باتیں ایسے دہراتے ہیں گویا کہ وہ رقص وسرور کی مجلس میں ہوں ، اور پھر وہ مجلس کے اندر تالیوں اور چیخوں کی گونج میں شراب کا ذکر کرتے ہیں اور یہ سب کچھ مشرکین کی عادات وعبادات میں سے ہے ۔

اللہ تعالی کا اس کے متعلق فرمان ہے :

{ اور ان کی نماز کعبہ کے پاس صرف یہ تھی کہ سیٹیاں بجانا اور تالیاں بجانا } الانفال ( 35 )

مکاء سیٹی بجانا اور تصدیۃ تالی بجانے کو کہتے ہیں ۔

اور بعض صوفی اپنے آپ کو لوہے کی سیخ مارتے اور یہ پکارتے ہيں (یاجداہ) تو اس طرح شیطان آکر اس کی مدد کرتا ہے کیونکہ اس نے غیراللہ کو پکارا ، اللہ تبارک وتعالی کا فرمان ہے :

{ اور جو شخص رحمن کی یاد سے غافل ہو جاۓ ہم اس پر ایک شیطان مقرر کر دیتے ہیں وہی اس کا ساتھی رہتا ہے } الزخرف ( 36 )

صوفی حضرات : کشف اور علم غیب کا دعوی کرتے ہیں اور قرآن کریم ان کے اس دعوی کی تکذیب کرتا ہے ۔

اللہ سبحانہ وتعالی کے فرمان کا ترجمہ کچھ اس طرح ہے :

{ کہہ دیجۓ کہ آسمان وزمین والوں میں سے اللہ تعالی کے علاوہ کوئ بھی غیب کا علم نہیں جانتا } النمل ( 65 )

صوفی حضرات : کا گمان ہے کہ اللہ تعالی نے دنیا محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے لۓ پیدا کی ہے ، اور قرآن کریم ان کی تکذیب کرتے ہوۓ کہتا ہے :

{ میں نے جنوں اور انسانوں کو صرف اپنی عبادت کے لۓ پیدا کیا ہے } الذاریات ( 56 )

اور اللہ تعالی نے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کومخاطب کرتے ہوۓ فرمایا یہ فرمایا ہے :

{ آپ اس وقت تک اپنے رب کی عبادت کرتے رہيں یہاں تک کہ آپ کو موت آجاۓ } الحجر ( 99 )

صوفی حضرات : اللہ تعالی کو دنیا میں دیکھنے کا گمان کرتے ہیں اور قرآن مجید ان کی تکذیب کرتا ہے جیسا کہ موسی علیہ السلام کی زبان سے کہا گیا { اےمیرے رب ! مجھے اپنا دیدار کردیجۓ کہ میں آپ کو ایک نظر دیکھ لوں اللہ تعالی نے ارشاد فرمایا تم مجھ کو ہر گز نہیں دیکھ سکتے } الاعراف ( 143 )

صوفی حضرات : کا گمان یہ ہے کہ وہ بیداری کی حالت میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے واسطہ کے بغیر علم ڈاریکٹ اللہ تعالی سے حاصل کرتے ہیں ، تو کیا وہ صحابہ کرام سے بھی افضل ہیں ؟۔

صوفی حضرات : اس بات کا دعوی کرتے ہیں کہ وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے واسطہ کے بغیرڈاریکٹ اللہ تعالی سے علم حاصل کرتے ہیں اور کہتے ہیں : میرے دل نے میرے رب سے بیان کیا ۔

صوفی حضرات : میلاد مناتے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم پر درود وسلام کے نام سے مجلسیں قائم کرتے ہیں ، اور ان میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی تعلیمات کی مخالفت کرتے ہوۓ شرکیہ ذکر اور قصیدے اور اشعار پڑھتے ہیں جن میں صریح شرک ہوتا ہے ۔

تو کیا نبی صلی اللہ علیہ وسلم اور ابوبکر ، عمر اور عثمان اور علی رضي اللہ تعالی عنہم اور آئمہ اربعہ وغیرہ نے میلاد منایا تو ان کیا ان کی عبادت اور علم زیادہ صحیح ہے یا کہ صوفیوں کا ؟

صوفی حضرات : قبروں کا طواف یا ان کا تبرک حاصل کرنے کے لۓ سفر کرتے اور ان پر جانور ذبح کرتے ہیں جوکہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے قول کی صریحا مخالفت ہے ۔ فرمان نبوی ہے :

( صرف تین مسجدوں کی طرف سفر کیا جاۓ مسجد حرام ، اور میری یہ مسجد ، اور مسجد اقصی ) صحیح بخاری و صحیح مسلم ۔

صوفی حضرات : اپنے مشائخ کے بارہ میں بہت ہی متعصب ہیں اگرچہ وہ اللہ تعالی اور رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی مخالفت ہی کیوں نہ کریں ، اور اللہ تعالی کا تو فرمان یہ ہے : { اے ایمان والو ! اللہ تعالی اور اس کے رسول سے آگے نہ بڑھو } الحجرات ( 2 )

صوفی حضرات : استخارہ کے لۓ طلسم اور حروف استعمال کرتے اور تعویذ گنڈا وغیرہ کرتے ہیں ۔

صوفی حضرات : وہ درود جو کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہیں نہیں پڑھتے بلکہ ایسے بناوٹی درود پڑھتے ہیں جس میں صریح تبرک اور شرک پایا جاتا ہے جس پر اللہ تعالی کی رضا حاصل نہیں ہوتی ۔

اوررہا یہ سوال کہ کیا صوفیوں کے مشائخ کا رابطہ ہے تو یہ صحیح ہے ان کا رابطہ شیطان سے ہے نہ کہ اللہ تعالی سے ۔

تو وہ ایک دوسرے کے دل میں چکنی چپڑی باتوں کا وسوسہ ڈالتے ہیں تاکہ انہیں دھوکہ میں ڈالیں اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :

{ اور اسی طرح ہم نے ہر نبی کے دشمن بہت سے شیطان پیدا کۓ تھے کچھ آدمی اور کچھ جن ، جن میں سے بعض بعض کو چکنی چپڑي باتوں کا وسوسہ ڈالتے رہتے تھے تا کہ ان کو دھوکہ میں ڈال دیں اوراگر اللہ تعالی چاہتا تو یہ ایسے کام نہ کرتے } الانعام ( 112 )

اور اللہ تبارک وتعالی کا فرمان ہے :

{ اور بیشک شیطان اپنے دوستوں کے دلوں میں ڈالتے ہیں } الانعام (121)

اور اللہ سبحانہ وتعالی کے فرمان کا ترجمہ ہے :

{ کیا میں تمہیں بتا‎ؤں کہ شیطان کس پر اتر تے ہیں وہ ہر ایک جھوٹے گنہگار پر اترتے ہیں } الشعراء ( 221 - 222 )

تو یہ وہ حقیقی رابطہ جو ان کے درمیا ن ہوتا ہے نہ کہ وہ رابطہ جو وہ گمان کرتے ہیں کہ اللہ تعالی سے رابطہ جو کہ بہتان اور جھوٹ ہے اور اللہ تعالی اس سے منزہ اور بلند وبالا ہے ۔ دیکھیں معجم البدع ( 346 - 359 )

اور صوفیوں کے بعض مشائخ کا اپنے مریدوں کی نظروں سے اوجھل ہونا بھی اسی رابطہ کا نتیجہ ہے جو کہ شیطان کے ساتھ ہوتا ہے ، حتی کہ بعض اوقات وہ شیطان انہیں دور دراز جگہ پر لے جاتے ہیں اور پھر اسی دن یا رات کو واپس لے آتے ہیں تا کہ ان کے مریدوں کو گمراہ کیا جاسکے ۔

تواسی لۓ یہ عظیم قاعدہ ہے کہ ہم خارق عادات کاموں سے اشخاص کا وزن نہیں کرتے بلکہ ان کا وزن کتاب وسنت کے قرب اور اس پر التزام کرنے کے ساتھ ہوگا ، اور اللہ تعالی کے اولیاء کے لۓ یہ شرط نہیں کہ ان کے ھاتھ پر خارق عادت کام ہو بلکہ وہ تو اللہ تعالی کی عبادت اس طریقے پر کرتے ہیں جو کہ مشروع ہے نہ کہ بدعات کو رواج دے کر ۔

اولیاء اللہ تو وہ ہیں جو کہ حدیث قدسی میں ذکر کۓ گۓ ہیں جسے امام بخاری رحمہ اللہ تعالی نے روایت کیا ہے ۔

ابو ھریرہ رضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتےہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : یقینا اللہ تعالی نے فرمایا ہے : ( جس نے میرے ولی سے دشمنی کی میری اس کے ساتھ جنگ ہے اور جو میرا بندا کسی چيز کے ساتھ میرا قرب حاصل کرتا ہے تو وہ مجھے اس چيزسے زیادہ پسند ہے جو میں نے اس پر فرض کیا ہے اور جو بندہ نوافل کے ساتھ میرا قرب حاصل کرتا ہے تو میں اسے اپنا محبوب بنا لیتا ہوں اور جب میں اس سے محبت کرنے لگتا ہو ں تو اس کا کان ہوتا ہوں جس سے وہ سنتا اور اس کی بصر ہوتا ہوں جس سے وہ دیکھتا اور اس کا ھاتھ ہوتا ہوں جس سے وہ پکڑتا اور اس کی ٹانگ ہو تا ہوں جس سے وہ چلتا ہے ، اگر وہ مجھ سے سوال کرتا ہے تو میں اسے عطا کرتا ہوں اور اگر میری پناہ میں آتا ہے تو میں اسے پناہ دیتاہوں ) ۔

اور اللہ تبارک وتعالی توفیق بخشنے والا اور صحیح راہ پر چلانے والا ہے ۔

واللہ تعالی اعلم
الشیخ محمد صالح المنجد

50 minute With Abdul Rauf by Geo News -- 5th August 2011 - Part 3/3


لم يعرف الإسلام اسم الصوفية في زمن الرسول وصحابته والتابعين حتى جاء جماعة من الزهاد لبسوا الصوف فأطلقوا هذا الاسم عليهم ، وقيل مأخوذ من كلمة صوفيا ومعناها الحكمة باليونانية وليست مأخوذة من الصفاء كما يدعي بعضهم لأن النسبة إلى الصفاء صفائي وليست صوفي .
وظهور هذا الاسم الجديد والطائفة التي تحمله زاد الفرقة في المسلمين ، وقد اختلف الصوفية الأوائل عن الصوفية المتأخرة التي انتشرت فيها البدع بشكل أكبر وعمّ فيهم الشرك الأصغر والأكبر وبدعهم مما حذرنا منه الرسول صلى الله عليه وسلم بقوله : " إياكم ومحدثات الأمور فإن كل محدثة بدعة وكل بدعة ضلالة. رواه الترمذي وقال حسن صحيح
وفيما يلي مقارنة بين معتقدات الصوفية وطقوسها وبين الإسلام المبني على القرآن والسنّة :
الصوفية : لها طرق متعددة كالتيجانية والقادرية والنقشبندية والشاذلية والرفاعية وغيرها من الطرق التي يدعي أصحابه أنهم على الحق وغيرهم على الباطل والإسلام ينهى عن التفرق ويقول الله تعالى { ...ولا تكونوا من المشركين (31) من الذين فرّقوا دينهم وكانوا شيعاً كل حزب بما لديهم فرحون } ( سورة الروم الآيات 31-32).
الصوفية : عبدوا غير الله من الأنبياء والأولياء الأحياء والأموات فهم يقولون ( يا جيلاني ويا رفاعي ويا رسول الله غوثاً ومدد ، ويا رسول الله عليك المعتمد ) .
والله ينهى عن دعاء غيره فيما لا يقدر عليه إلا هو ويعدّه شركاً إذ يقول { ولا تدع من دون الله ما لا ينفعك ولا يضرك فإن فعلت فإنك من الظالمين } سورة يونس ،آية 106 .
الصوفية : تعتقد أن هناك أبدالاً وأقطاباً وأولياء سلّم الله لهم تصريف الأمور وتدبيرها والله يحكي جواب المشركين حين يسألهم :{ ومن يدبر الأمر فسيقولون الله } سورة يونس : 31 . فمشركو العرب أعرف بالله من هؤلاء الصوفية .
والصوفية يلجأون لغير الله عند نزول المصائب والله يقول : { وإن يمسسك الله بضر فلا كاشف له إلا هو وإن يمسسك بخير فهو على كل شيء قدير } .
بعض الصوفية : يعتقد بوحدة الوجود فليس عندهم خالق ومخلوق فالكل خلق والكل إله .
الصوفية : تدعو إلى الزهد في الحياة وترك الأخذ بالأسباب وعدم الجهاد والله تعالى يقول { وابتغ فيما آتاك الله الدار الآخرة ولا تنس نصيبك من الدنيا } ( سورة القصص ،آية 77).
{ وأعدوا لهم ما استطعتم من قوة } ( سورة الأنفال ،آية 60) .
الصوفية : تعطي مرتبة الإحسان إلى شيوخهم وتطلب من المريدين أن يتصورا شيخهم عندما يذكرون الله حتى في صلاتهم وكان بعضهم يضع صورة شيخه أمامه في الصلاة والرسول صلى الله عليه وسلم يقول : الإحسان أن تعبد الله كأنك تراه فإن لم تكن تراه فإنه يراك ". رواه مسلم .
الصوفية : تبيح الرقص والدف والمعازف ورفع الصوت بالذكر والله تعالى يقول { إنما المؤمنون الذين إذا ذكر الله وجلت قلوبهم } ( سورة الأنفال ، آية 3 ) .
ثم تراهم يذكرون بلفظ الجلالة : الله فقط فيقولون الله ، الله ، الله وهذه بدعة وكلام غير مفيد لمعنى شرعي بل يصلون إلى حدّ التلفظ بكلمة ( أهـ ، أهـ ) . أو هو ، هو . والإسلام والسنة أن يذكر المسلم ربّه بكلام مفيد صحيح يُؤجر عليه كقوله : سبحان الله والحمد له ولا إله إلا الله والله أكبر ونحو ذلك .
الصوفية تتغزل باسم النساء والصبيان في مجالس الذكر فيرددون اسم الحب والعشق والهوى وغيرها وكأنهم في مجلس طرب فيه الرقص وذكر الخمر مع التصفيق والصياح وكلّ هذا من عادة المشركين وعبادتهم قال الله تعالى : { وما كان صلاتهم عند البيت إلا مكاء وتصدية } سورة الأنفال آية 35 .( المكاء : الصفير ، والتصدية : التصفيق ) .
بعض الصوفية يضرب نفسه بسيخ حديد قائلاً ( يا جداه ) فتأتيه الشياطين ليساعدوه على فعله لأنه استغاث بغير الله ، قال الله تعالى : { ومن يعش عن ذكر الرحمن نقيض له شيطاناً فهو له قرين } سورة الزخرف ، آية 36 .
الصوفية : تدعي الكشف وعلم الغيب والقرآن يكذبهم : قال عزّ وجلّ : { قل لا يعلم من في السماوات والأرض الغيب إلا الله } . ( سورة النمل آية 65 ) .
الصوفية : تزعم أن الله خلق الدنيا لأجل محمد صلى الله عليه وسلم والقرآن يكذبهم قائلاً { وما خلقت الجن والإنس إلا ليعبدون } (سورة الذرايات آية 56) .
وخاطب الله سبحانه الرسول صلى الله عليه وسلم بقوله { واعبد ربك حتى يأتيك اليقين } سورة الحجر آية 99).
الصوفية : تزعم رؤية الله في الدنيا والقرآن يكذبهم حين قال على لسان موسى :{ رب أرني أنظر إليك قال لن تراني } (سورة الأعراف ، آية 143) .
الصوفية : تزعم أنها تأخذ العلم من الله مباشرة بدون واسطة الرسول صلى الله عليه وسلم يقظة فهل هم أفضل من الصحابة ؟
الصوفية : تزعم أنها تأخذ العلم من الله مباشرة بدون واسطة الرسول صلى الله عليه وسلم فيقولون : حدثني قلبي عن ربي .
الصوفية : تقيم الموالد والاجتماع باسم مجلس الصلاة على النبي صلى الله عليه وسلم وهم يخالفون تعاليمه حينما يرفعون أصواتهم في الذكر والأناشيد والقصائد التي فيها الشرك الصريح . وهل احتفل رسول الله صلى الله عليه وسلم بمولده أو أبو بكر وعمر وعثمان وعليّ والأئمة الأربعة وغيرهم فمن أعلم وأصحّ عبادة هؤلاء أم الصوفية .
الصوفية : تشد الرحال إلى القبور للتبرك بأهلها أو للطواف حولها أو الذبح عندها مخالفين قول الرسول صلى الله عليه وسلم : " لا تشد الرحال إلا إلى ثلاثة مساجد المسجد الحرام ومسجدي هذا والمسجد الأقصى " متفق عليه .
الصوفية : تتعصب لشيوخها ولو خالفت قول الله ورسوله ، والله تعالى يقول : { يا أيها الذين آمنوا لا تقدموا بين يدي الله ورسوله } سورة الحجرات آية 1 .
الصوفية : تستعمل الطلاسم والحروف والأرقام لعمل الاستخارة والتمائم والحجب وغير ذلك .
الصوفية : لا تتقيد بالصلوات الواردة عن الرسول صلى الله عليه وسلم بل يبتدعون صلوات فيها التبرك الصريح والشّرك الفظيع الذي لا يرضاه الذي يصلون عليه .
أما السؤال عن صحة اتصال مشايخ الصوفية فهي صحيحة لكنها مع الشياطين وليس مع الله
فيوحي بعضهم إلى بعض زخرف القول غرورا قال تعالى : { وكذلك جعلنا لكل نبي عدوّاً شياطين الإنس والجن يوحي بعضهم إلى بعض زخرف القول غرورا ولو شاء ربك ما فعلوه } الأنعام (112) . وقال تعالى : { وإن الشياطين ليوحون إلى أوليائهم } الأنعام /121) .
وقال تعالى : { هل أنبئكم على من تنزل الشياطين تنزل على كل أفاك أثيم ) الشعراء 121/222) . فهذا هو الاتصال الذي يحدث حقيقة ، لا الاتصال الذين يزعمونه زوراً وبهتاناً من اتصالهم بالله ، تعالى الله عن ذلك علواً كبيرا ، يُنظر معجم البدع : 346- 359
واختفاء بعض مشايخ الصوفية فجأة عن أنظار أتباعهم هو نتيجة لهذا الاتّصال مع الشياطين حتى لربما حملوهم إلى أماكن بعيدة وعادوا بهم في اليوم نفسه أو الليلة نفسها إضلالا للبشر من أتْباعهم .
ولذلك كانت القاعدة العظيمة أننا لا نزن الأشخاص بالخوارق التي تظهر على أيديهم وإنما بحسب بعدهم وقربهم والتزامهم بالكتاب والسنّة ، وأولياء الله حقّا لا يُشترط أن تظهر لهم خوارق بل هم الذين يعبدون الله بما شرع ولا يعبدونه بالبدع ، أولياء الله الذين ذكرهم ربنا في الحديث القدسي الذي رواه البخاري في الصحيح 5/2384 عن أبي هريرة قال : قال رسول الله صلى الله عليه وسلم : " إن الله قال من عادى لي وليا فقد آذنته بالحرب وما تقرب إلي عبدي بشيء أحب إلي مما افترضت عليه وما يزال عبدي يتقرب إلي بالنوافل حتى أحبه فإذا أحببته كنت سمعه الذي يسمع به وبصره الذي يبصر به ويده التي يبطش بها ورجله التي يمشي بها وإن سألني لأعطينه ولئن استعاذني لأعيذنه " . والله الموفق والهادي إلى طريق الصّواب .
الإسلام سؤال وجواب
الشيخ محمد صالح المنجد

No comments: