Sunday, April 24, 2011

Stinging Hate Campaign of Jang Group/GEO TV against Sindhi Community.

The popular talking point has become, once again, that the government is playing ‘Sindh card’ in its relationship to the judiciary. But a careful examination of recent media articles suggests that perhaps there is another player holding the cards. ‘Sindh card’ refers of course to the idea that President Zardari and other PPP politicians attempt to energize a base of Sindhi supporters by invoking provincialism. Ethnic parties certainly exist, but PPP is a national party that enjoys support across ethnic and provincial lines. So while PPP might have a base in Sindh, that is not sufficient to classify it as an ethnic party. Nevertheless, a series of media reports suggest that some in the media might be attempting to do just that. REFERENCES: Who is playing Sindh card?
Sunday, April 17, 2011, Jamadi-ul-Awwal 13, 1432 A.H

Sunday, April 17, 2011, Jamadi-ul-Awwal 13, 1432 A.H

Let me tell you very clearly as to who is playing this “Alleged Sindh Card” – It is the Jang Group and Shaheen Sehbai who had himself written on these parochial lines after the death of Benazir Bhutto.

Muhammad Saleh Zaafir & Jang Group Hate Muhajirs, Altaf Hussain and MQM.


Deeply aggrieved, full of anger and passionately in mourning, Sindhis are baffled and confused at the strange reaction in Punjab, specially the ruling elite which has adopted an aggressively parochial attitude, not just against the PPP but against entire Sindh, after the death of Benazir Bhutto. The accusations that large numbers of Punjabis have been forced to flee Sindh and become refugees in their province may help the PML-Q leaders rebuild their shattered election campaign but it is certainly not helping national unity and the cause of the federation of Pakistan. A quick tour of the heart broken hinterland of Sindh, starting from Karachi to Jamshoro, Sehwan Sharif, Dadu, Larkana, Naudero, Garhi Khuda Bux, Sukkur, Khairpur, Nowshero Feroze, Moro, Hala, Hyderabad and back to Karachi by road, revealed many facets of the Bhutto murder fallout which cannot be imagined while sitting in cozy drawing rooms before TV sets. It was quite baffling to note that while we were driving towards Larkana on the Jamshoro-Sehwan route, not one burnt vehicle was seen anywhere from near Karachi until we entered the constituency of Benazir Bhutto in Larkana, over 250 miles away, where we saw a skeleton of a bus. Neither could we see any burnt banks or buildings on this route.

Jawab Deyh - 21st March 2010 - Dr Qadir Magsi - Part 1


But strikingly on our way back from Sukkur to Hyderabad , the damage was evident but not as widespread as was being reported or projected to be. Some 100 trucks, buses and very small number of cars were still presenting the scene of a battlefield, especially in Moro and some other portions of the National Highway. A few banks on the main road were also visibly damaged. But the interesting explanation we got by talking to residents and locals was that most of the damage all along the National Highway was in areas and constituencies which were not PPP strongholds and were either represented by Muslim Leagues or other breakaway PPP factions like the Jatois and others. Many gas and petrol stations were still totally undamaged while just in front of them, on the road, cars and buses had been burnt. The protestors were either not interested in burning some property or were cleverly selective in picking their targets. At one point in front of a huge CNG station, which was intact, several vehicles were burnt but right across the road was a Rangers headquarter and no one seemed to have noticed the violence or done anything to stop it. When we crossed it the Rangers were being guarded by a police picket and van, odd as it may seem.

Jawab Deyh - 21st March 2010 - Dr Qadir Magsi - Part 2


So when the majority PPP dominated areas were relatively quiet, how would the violence in non-PPP areas be explained. The PPP leadership, rank and file have a ready made explanation that the reaction was orchestrated to blame Sindh and PPP and it was exaggerated to suit the establishment to counter the wave of sympathy for the PPP. It looks somewhat obvious that such an explanation would be given by the PPP but the sudden regression of the pro-establishment section of the Punjab leadership into a parochial mode has lent a lot of credence to the Sindhis’ complaints. Talking to the deeply disturbed and extremely nervous PPP leadership in Larkana, Naudero and Garhi Khuda Bux, the clear impression that emerges is not good news for the federation. Mr Asif Ali Zardari and Bilawal Bhutto made extra efforts in their early appearances before the media to send the message across that the PPP still wanted the federation, as it did when Benazir Bhutto was alive. But this message has been distorted by Punjab. The creation of a refugee centre in the heart of Lahore was almost hitting the federation below the belt. Some of the Punjabi small businessmen, roadside gas station owners and hotel stops whom we met on our journey were highly critical of this Punjab move. One of them near Hala said he was always a PML voter but would now vote for the PPP as Punjabi leadership, especially close to the establishment, was unfair. He was safe and doing his business without any fear though he admitted that for four days after the Bhutto murder, he did not come out of the house or open his business. His hotel and shops had not been touched by anyone during the riots. A PPP student wing leader in Larkana was specifically moved by the huge ads in newspapers from the PML which isolated Sindhis and spoke of large-scale migration from Sindh. “What do they want now that they have killed so many of our leaders? Do they want to push us into the sea. This is all rubbish and meant to fan hatred against Sindh for political gains,” he reacted. The PPP leadership is having a bad time in the sense that they have been pushed to the wall and now fears they have to take on the establishment which they fear would be a disaster for the country. Senior leaders candidly admit that the death of Benazir Bhutto has landed the party into a crisis but unity in the ranks and swift transition of power from Benazir to Asif Zardari has helped the party leaders and cadres focus on the real issue of winning the elections, helped by the sympathy wave.

Jawab Deyh - 21st March 2010 - Dr Qadir Magsi - Part 3


One leader said it was challenging for Mr Zardari to get into the shoes of Ms Bhutto but since she had passed on the leadership to him in her will, the party had accepted the decision and quickly converted the street protests and violence into a determined electoral mission to win the elections. But February 18 was the cut off date for all practical purposes and it was impossible for any PPP leader, including Mr Zardari, to show any soft corner for President Pervez Musharraf or the establishment before the elections. “We have to decide that if Feb 18 turns out to be a fraud with us and the nation, what we have to do and this is not an easy decision but this decision cannot be put off any more,” said one leader. “And this time President Musharraf will have to accept all our demands without any precondition or bargaining because we have already paid the highest price that could be asked in any bargain.” Senior PPP leaders do not believe that the establishment would go for the elections even on Feb 18, if the PPP wave continues, which it will. “They are not prepared to hand over power through the ballot box and unless they are in a position to either manipulate the result and contain the PPP or strike a deal on their terms, they would not agree to a poll,” one leader said. “But the PPP is not in a position to offer anything now. If Mr Musharraf wants a deal with the PPP, he will first have to hold a free and fair election without asking for anything in return. This risk he has to take, or otherwise take much bigger risks.”

Jawab Deyh - 21st March 2010 - Dr Qadir Magsi - Part 4


This PPP sentiment is reflected at all levels of the leadership which is now gearing up to accept the coming challenges. Whatever doubts and suspicions people may have about Mr Zardari, he has now been catapulted into a position where he has very little room for maneouvre or go against the general party sentiment. People want revenge and he has to lead the party into getting one. “The PPP candidates have been decided by Benazir so those cannot be changed. The PPP leadership all over the country is in place so no particular Zardari men can be inducted. The election is just around and no one can risk intra-party infighting. The mourning has been successfully converted into a fury to take revenge at the ballot boxes so the party has been saved from disarray,” according to a senior leader. This transition from protests and fury on the streets to revenge through democracy has been remarkably smooth. As we drove hundreds of miles in PPP and non-PPP territory, life had come to almost normal and only the remnants of the burnt out trucks, especially NLC containers and car-carriers, reminded us of the angry reaction. The first hurdle has successfully been crossed by the PPP, headed by Mr Zardari to control the people and turn them into highly motivated and committed workers. REFERENCE: Sindh is angry and Punjab is not helping The News, January 6, 2008 By Shaheen Sehbai 

Daily Jang had carried this “Purely Anti Sindhi Community” Advertisement after the death of Benazir Bhutto.

PML-Q Punjab alters ethnically exclusive ad
By Amar Guriro and Qazi Asif

KARACHI: The PML-Q Punjab has amended the language of a controversial advertisement it published on riot damage compensation for non-Sindhis in Sindh, after a bad reaction from the southern province’s party leaders and workers. The advert now says Sindhis (in bold lettering) can also apply for compensation.

But the damage has been done. The PML-Q central leaders should find out who allowed the publication of a party advertisement excluding Sindhis from claiming damages in the post-BB assassination riots, argued the party’s Sindh information secretary Saturday.

A flurry of letters has made its way to the party’s chief Chaudhry Shujaat Hussain. “The way the PML-Q started an advertisement campaign in such sensitive conditions is strange,” said Jafar al Hasan, president, PML-Q (Youth Wing) Sindh, who added that he and others registered their protest.

The PML-Q Punjab started the advertisement campaign in the national print media Friday. On the first day, four colored half-page advertisements were printed with news clippings, saying that people affected by the riots could apply for compensation. One of the news items said that during violence in Bin Qasim (Karachi) 12 girls were kidnapped and raped – however, it failed to mention which newspaper published the stories. “I don’t remember exactly which newspaper published this story but I think it was an Islamabad-based Urdu newspaper,” said Mian Abdul Sattar, senior vice president PML-Q Punjab.

“It is against the party’s basic manifesto and with such a move the PML-Q leadership is dividing the party workers ahead of the polls; that would be so dangerous,” said Ismail Rahu, a former minister and PML-Q leader. “I have collected the details of the losses in my district and most of the sufferers were Sindhis. Most of the petrol pumps, shops and vehicles set on fire were not destroyed by Sindhis.”

Others argued that it was a PML campaign tactic. According to the PPP’s Syed Naveed Qamar, after Benazir’s assassination, the people sympathized with the PPP, something the PML-Q leaders were aware of.

The PML advertisement asked non-Sindhis in Sindh (Mohajirs, Pathans, Punjabis etc) to contact it with details of the losses they suffered in the riots after Benazir’s killing. The criticism was that the advert implied that Sindhis did not suffer any losses and were to blame for the rioting and looting.

Haleem Adil Shaikh has written a critical letter to the PML-Q’s central president Chaudhry Shujaat, asking for an unconditional apology for the people of Sindh. Shaikh, who is also a settler in Sindh, said that the advertisement ignored Sindhi people of Sindh. If the advertisement campaign was a mistake, then an inquiry should be conducted to find out who is responsible and who must apologize unconditionally to the Sindhi people, Shaikh wrote. If the advertisement was deliberate, then its aim was to cause linguistic and ethnic tensions. “There was a strong feeling that the party was only for the Punjab,” he said. Hafiz Tabassi, the media coordinator for the PML-Q Sindh, said that the letter had been sent to Shujaat already.
PML-Q Punjab alters ethnically exclusive ad By Amar Guriro and Qazi Asif Sunday, January 06, 2008\story_6-1-2008_pg12_1 

Sindhi cap is worn by every Pakistan from Keti Bandar to Landi Kotal. Pathans Balochs and even Punjabis wear the same cap with slight difference in design. My contention is why Sindhis have felt a cultural threat when a third grade journalist like Saleh Zafar passed derogatory remarks against cap. Fingers should be aimed at The GEO TV channel and Jang Group for tinkering with the sentiments of the people on one hand they demand "Pakistani Behaviour" and Pakistani Dress from Zardariwhereas for 9 years US backed Martial Law Administrator General Musharraf visited different foreign countries wearing Western Suits [was that a Pakistani Dress???] and nobody objected [shame on Pakistani Media particularly GEO TV]. Sindhi Cap and Shalwar Kameez are the dress of not only Sindh but Pakistan as well, because till the last news Sindh is in Pakistan. I still remember Musharraf's Photos published in Daily Dawn main page holding 2 Dogs "Dot" and "Buddy" in 99/2000.

Is it Pakistani Culture? [I still remember Musharraf's Photos published in Daily Dawn/and Daily Jang/The News Front Page main page holding 2 Dogs "Dot" and "Buddy" in 99/2000]
Is it Pakistani Dress? [Was Musharraf wearing Pakistan's National Dress?]

یہ ٹوپی باز !

اصناف: بحث, ثقافت, سیاست, پاکستان
وسعت اللہ خان 2009-12-02 ،12:23

جس طرح عالم ہونا خوبی ہے، اسی طرح ایک جید جاہل ہونا بھی ہر کسی کے بس کا کام نہیں ہے۔ ہفتے بھر پہلے میں نے ایک پاکستانی چینل پر دو جیدوں کی پونے دو منٹ کی گفتگو دیکھی اور سنی۔ جس سے اندازہ ہوا کہ صدرِ مملکت آصف زرداری نے کابل میں صدر حامد کرزئی کی تقریبِ حلف برداری میں سندھی ٹوپی پہن کر سندھ کارڈ کھیلنے کی کوشش کی۔ صدرِ مملکت چونکہ وفاق کی علامت ہیں اس لیے انہیں بین الاقوامی سطح پر ملک کی نمائندگی کرتے ہوئے علاقائی لباس کی بجائے قومی لباس اور ٹوپی زیبِ تن کرنا چاہیے وغیرہ وغیرہ۔

میں اب تک سمجھتا تھا کہ سندھ ایک وفاقی اکائی ہے اور اس ناطے وہاں کا لباس اور ٹوپی بھی وفاقی ثقافت کا حصہ ہے۔ لیکن دونوں جئیدین کی گفتگو سے پتا چلا کہ سندھ پاکستان میں شامل نہیں بلکہ نائجیریا یا انڈونیشیا یا بولیویا کا حصہ ہے۔

دوسری بات یہ معلوم ہوئی کہ اگر کوئی فوجی آمر وردی پہن کر بیرونِ ملک جائے تو یہ فوجی کارڈ کھیلنا نہیں کہلائے گا۔ اگر کوئی صدر یا وزیرِ اعظم تھری پیس سوٹ اور ٹائی میں غیر ملکی دورے پر جائے تو یہ مغربی کارڈ کھیلنے کے مترادف نہیں ہوگا۔ کوئی حکمران اگر شلوار قمیض پہن کر ریاض ایرپورٹ پر اترے تو یہ پنجابی، پختون، سندھی یا سرائیکی یا بلوچ کارڈ تصور نہیں ہوگا لیکن سندھی ٹوپی پہننے سے وفاقی روح کو اچھا خاصا نقصان پہنچ سکتا ہے۔

ایسے ہی ٹوپی بازوں نے پاجامہ کرتا پہن کر قرار دادِ لاہور پیش کرنے میں پیش پیش بنگالیوں کو شلوار، شیروانی اور جناح کیپ پہننے سے انکار کے جرم میں ملک بنتے ہی 'پاکستانیت' کے دائرے سے باہر نکال دیا تھا۔ ان ہی عالی دماغ تنگ نظروں نے سینتیس برس پہلے سندھی کو صوبائی زبان کا درجہ دیے جانے پر 'اردو کا جنازہ ہے، زرا دھوم سے نکلے' کا نعرہ لگا کر پورے سندھ کو آگ اور خون میں جھونکنے کا اہتمام کرنے کی کوشش کی تھی۔

اگر ان میڈیائی مجتہدین کا بس چلے تو وہ محمد علی جناح کی ایسی تمام تصاویر اتروا دیں جن میں وہ کھلا لکھنوی پاجامہ یا چوڑی دار پاجامہ پہن کر ہندوستانی کارڈ اور قراقلی ٹوپی پہن کر بلوچ کارڈ اور فیلٹ ہیٹ پہن کر برطانوی سامراجی کارڈ کھیلنے میں مصروف ہیں۔ علامہ اقبال کی ایسی تمام تصاویر نذرِ آتش کروا دیں جن میں وہ تہبند میں ملبوس پنجابی کارڈ یا پھندنے والی لال ٹوپی پہن کر ٹرکش کارڈ کھیل رہے ہیں۔

ان ٹوپی ڈرامہ بازوں کو تو شاید یہ بھی معلوم نہ ہو کہ جب سندھ اسمبلی میں قرار دادِ الحاقِ پاکستان منظوری کے لیے پیش ہوئی تھی تو بیشتر مسلمان ارکانِ اسمبلی نے سندھی ٹوپی پہن کر اس کی تائید کی تھی۔ انہیں غالباً یہ خبر بھی نہیں پہنچی کہ فی زمانہ سندھی ٹوپی سندھ سے زیادہ جنوبی پنجاب، صوبہ سرحد، بلوچستان اور افغانستان میں پہنی جاتی ہے۔

تو کیا ہمارے گھروں کی ٹی وی سکرینوں پر تاریخ اور ثقافتی جغرافیے سے نابلد خوخیاتے بندر استرا لہراتے ہوئے ایسے ہی ٹوپی ڈرامہ کرتے رہیں گے؟

Dr Shahid Masood, Irfan Siddiqui & allegedly a Senior Correspondent Muhammad Saleh Zaafir [Jang Group/GEO TV] want Ethnic Clash between Communities of Sindh, Dr Shahid Masood and Muhammad Saleh Zaafir [Jang Group] insult Sindhi Community and create more problems in an already disturbed Pakistan.

Meray Mutabiq 21st Nov 2009 Part 4 NRO [Insuting Remarks of Jang Group Correspondent on Sindhi Cap]


Please keep in mind while reading the text below that Mr. Shaheen Sehbai, Group Editor, The News International is nowadays on vacation in USA with his family. Mr Irfan Siddiqui [Noted Columnist of Daily Jang and Former PRO of President House Islamabad and earlier he was a Regular Columnist of Weekly Takbeer] has also been declared as Mentor of Dr Shahid Masood. Irfan Siddiqui want Civil War in Sindh because he is adding fuel to the fire between MQM and PPP. REFERENCE: Read his article on Eid Day’s Daily Jang Saturday,November 28, 2009, Zil’Hajj 10, 1430 A.H


How come Dr Shahid know that Pashtuns in Karachi are heavily armed???

On Wednesday and Thursday when the Sindh interior minister almost declared full war on the MQM, revealing that all the closed criminal cases of the MQM were done fraudulently, the reality has now come to the surface. This is the final showdown the PPP is trying to start so that if President Zardari is disqualified, the Sindh Card, as it is generally known, could be played effectively. The problem with President Zardari and his cronies is that they don’t know how to defend their past corruption and how to convince their coalition partners and the relevant players in the establishment that they have changed their ways. This lack of minister almost declared full war on the MQM, revealing that all the closed criminal cases of the MQM were done fraudulently, the reality has now come to the surface. This is the final showdown the PPP is trying to start so that if President Zardari is disqualified, the Sindh Card, as it is generally known, could be played effectively.

The problem with President Zardari and his cronies is that they don’t know how to defend their past corruption and how to convince their coalition partners and the relevant players in the establishment that they have changed their ways. This lack of defence is driving them into desperation and as officially announced by Zulfikar Mirza, the ultimate weapon they have is the Sindh Card to save themselves, or, if they fail, to take the entire system down if they fail. I am a proud Pakistani and also a proud Sindhi, but I don’t believe in the Sindh card. I am sure that such a card does not exist anymore. It is again wrong to suggest that father of the nation Quaid-i-Azam Muhammad Ali Jinnah used the Sindh card for creation of Pakistan. It is simply childish to say that adoption of resolution in favour of Pakistan in the Sindh Assembly in 40s was an exploitation of the Sindh card. It shows lack of sense of history. The passage of resolution by the Sindh Assembly establishes the negation of the Sindh card. The role of the Awami National Party is also crucial in this situation as its role in any clash between the PPP and the MQM in Karachi will be pivotal as thousands of Pathans, with arms, could play havoc. REFERENCE: The desperation of PPP to shoot the messenger Friday, November 27, 2009 By By Dr Shahid Masood [URDU TEXT] Daily Jang dated Friday, November 27, 2009, Zil’Hajj 09, 1430


Now some Harsh Facts


پاکستان کے ساٹھ سال اور سندھ (حصہ اول)

سہیل سانگی
حیدر آباد

وقتِ اشاعت: Monday, 27 August, 2007, 10:59 GMT 15:59 PST 

سندھی احتجاج
آئے دن سندھ کےلوگ احتجاج اور مظاہرے کرتے رہتے ہیں

آخر مسئلہ کیا ہے کہ آئے دن سندھ کےلوگ احتجاج اور مظاہرے کرتے رہتے ہیں اور آزادی کے ساٹھ برس گزارنے کے بعد بھی اپنے آپ کو خوش نہیں پا رہے ہیں۔
وہ وفاق کے ہر منصوبے کو بڑے شک و شبہے کی نظر سے دیکھتے ہیں۔
قیامِ پاکستان کے بعد سندھ میں کیا ہوا، اور سندھی عوام کے ساتھ کیا ہوا؟
دراصل یہی وہ اسباب ہیں جس کی وجہ سے سندھ کے قدیم باشندے ناخوش ہیں۔
آزادی سے لے کر اب تک کی سندھ کی سیاسی، معاشی اور سماجی صورتحال پر سرسری نظر اسباب و وجوہات کو عیاں کردیتی ہے۔
زبان اور ثقافت
قیام پاکستان کے بعد سندھ سے مجموعی آْبادی کی بیس فیصد ہندو آبادی کے انخلاء اور اس کے بدلے بھارت کے مختلف صوبوں سے آ کر بسنے والی بڑی آبادی کی وجہ سے سندھ کے سماجی، ثقافتی اور سیاسی حیثیت متاثر ہوئی۔
ہندو آبادی زبان اور ثقافت کے لحاظ سے سندھ کا حصہ تھی۔ ہندوؤں نے مختلف شہروں میں سکول، کالج، تفریح گاہوں اور ہسپتالوں کے حوالوں سے کئی فلاحی کام کیے تھے۔ قیامِ پاکستان کے بعد سندھ میں ایسے کاموں اور ایسی سہولیات بڑھانے اور برقرار رکھنےکا سلسلہ رک گیا۔
دوسری زبانیں بولنے والوں کی ایک بڑی آبادی کے بسنے سے سندھ کی زبان اور کلچر پر برا اثر پڑا۔
اس کے علاوہ حکومتی سطح پر بھی بعض ایسے اقدامات کیے گئے جس سے سندھی زبان کی حیثیت مزید متاثر ہوئی۔
لیاقت علی اور ٹرومین
لیاقت علی خان امریکی صدر ٹرومین کے ساتھ

آزادی کے ایک سال بعد سندھ یونیورسٹی کو کراچی سے حیدر آباد منتقل کر دیاگیا اور کراچی کے لیے الگ یونیورسٹی قائم کی گئی۔ سندھ کے ممتاز دانشور محمد ابراہیم جویو نے ایک مقالے میں کہا تھا کہ سندھ یونیورسٹی کی حیدر آباد منتقلی کے وقت وزیرِاعظم لیاقت علی خان نے خوش گپیوں میں کہا تھا کہ یہ یونیورسٹی اونٹ اور گدھا گاڑی کلچر والوں کے لیے ہے۔
آئندہ پانچ برسوں میں کراچی یونیورسٹی میں سندھی کو امتحانی زبان کے طور پر ختم کردیاگیا اور صرف اردو، بنگالی اور انگریزی میں امتحان دینے کی اجازت دی گئی۔ کچھ ہی عرصہ بعد کراچی میں بعض سندھی سکول بند کر دیےگئے یا غیر سندھیوں کو بطور اساتذۃ مقرر کیا گیا۔
1947 میں ہریانہ اور راجپوتانہ سے نقل مکانی تو بند ہوگئی لیکن یو پی اور سی پی سے ہجرت کا سلسلہ کئی سال تک جاری رہا۔ باہر سے آنے والے لوگوں کی تعداد یہاں سے جانے والوں کے مقابلے میں کئی گنا زیادہ تھی۔ اس صورتحال پر سندھ کے وزیرِاعلیٰ ایوب کھوڑو کو مجبوراً یہ کہنا پڑا کہ سندھ نے صرف سات لاکھ مہاجر قبول کرنا منظور کیے تھے، مزید لوگ نہ بھیجے جائیں۔
مہاجروں کی آبادکاری کے لیے وزارتِ بحالیات اور کئی چھوٹے بڑے ادارے قائم کیے گئے۔ چنانچہ جعلی کلیموں کے ذریعے بڑی بڑی جائیدادیں ہتھیانے کا سلسلہ شروع ہوگیا۔
ایوب کھوڑو
ون یونٹ بنانے کے اہم کردار ایوب کھوڑو جن کو سندھ لوگ اب بھی اچھے الفاظ میں یاد نہیں کرتے

حکومت کے بیشتر اہلکار مہاجر یا پھر پنجابی تھے۔ انہوں نے افسرشاہی کو اپنے قبضے میں لے کر ہندوؤں کی متروکہ شہری جائیدادوں کے کلیم منظور کرانے کے ساتھ ساتھ زرخیز اور قابل کاشت دیہی زمینوں پر بھی قبضہ کرلیا جو ہندو چھوڑ گئے تھے۔ ان زمینوں کے حقیقی وارث سندھی کسان تھے لیکن آزادی کے خواب کی تعبیر کے برعکس ہندو کی جگہ مسلمان مہاجر آگیا۔
پنجاب کے ایک محقق احمد سلیم اس صورتحال کے بارے میں لکھتے ہیں کہ یہ کلیم یا تو بالکل جھوٹے ہوتے تھے یا پھر اصل سے زیادہ۔
قیامِ پاکستان سے چند ہی ماہ قبل سندھ اسمبلی نے ایک بل منظور کیا تھا کہ صوبے میں ہندوؤں کے پاس مسلمانوں کی جو زمینیں گروی ہیں ان کو وہ بیچ نہیں سکتے۔ اس قانون پر پنجاب میں توعمل درآمد کیا گیا لیکن سندھ میں گورنر نے بل پر دستخط نہیں کیے اور وہ باقاعدہ قانون نہ بن سکا۔ پھر جب پاکستان بنا تو یہ زمینیں ہندوؤں کی ملکیت قرار دے دی گئیں اور کلیموں کے ذریعے مہاجروں کو ملیں۔ مقامی لوگ زمین کی ملکیت سے محروم ہوگئے۔ بعض دستاویزات کے مطابق یہ اراضی40 لاکھ ایکڑ یا کل زرعی زمین کا بیالیس فی صد تھی۔
اسی کے ساتھ سندھ ریفیوجی رجسٹریشن آف لینڈ کلیم ایکٹ کے تحت مارچ 1947 کے بعد ہندوؤں کی بیچی گئی زمینوں کے معاہدوں کو منسوخ قرارا دے دیا گیا۔
سندھ ریفیوجی ایکٹ کے تحت ہجرت کر کے آنے والوں کو بھارت میں اپنی جائیداد کے ثبوت سے مستثنیٰ قرار دیاگیا۔
ایوب خان
صدر ایوب خان نے 1961 میں مارشل ریگولیشن کے ذریعے کلیموں کی دوبارہ تصدیق لازمی قرار دی

جب بھارتی حکومت نے زرعی اصلاحات کے تحت زمینیں ضبط کیں تو حیدرآباد دکن، یو پی، سی پی وغیرہ کے ان متاثرہ لوگوں کا نقصان پورا کرنے کرنے کے لئے1958 میں ایک اور قانون بنایا گیا۔ بعد میں جب حکومت کو محسوس ہوا کہ معاملہ گڑبڑ ہے تو صدر ایوب خان نے 1961 میں مارشل ریگولیشن کے ذریعے کلیموں کی دوبارہ تصدیق لازمی قرار دی لیکن چند ہی ماہ میں انہیں یہ قانون واپس لینا پڑا۔
شہری جائیدادیں
پچاس کی دہائی میں ہی ایک اور قانون بنایاگیا کہ مقامی لوگ دس ہزار روپے سے زیادہ مالیت کی شہری جائیداد نہیں خرید سکتے۔ بڑے بڑے مکانات، ہوٹل، سینما ہاؤس نیلام کیےگئے اور ان کی ادائیگی کلیم کے کاغذات کے ذریعے کی گئی جن کا یا تو وجود نہ تھا یا کوئی ثبوت نہ تھا۔
پچاس ہی کے عشرے میں کوٹری بیراج بنا تو اس کے زیرِ کمانڈ تین لاکھ چالیس ہزار ایکڑ زمین سول اور فوجی نوکرشاہی کو دی گئی۔
پروفیسر عزیزاحمد اپنی کتاب ’کیا ہم اکٹھے رہ سکتے ہیں‘ میں لکھتے ہیں کہ زمینیں سندھی ہاریوں کے پاس جانے کی بجائے پنجابیوں، مہاجروں اور پٹھانوں کے ہاتھوں میں جانا شروع ہوئیں۔
ایوب خان
ایوب خان گڈو بیراج کا افتتاح کر رہے ہیں

انیس سو اکیاون میں ایک سندھی روزنامہ نے اپنے اداریے میں لکھا: ’سندھ کے لوگوں کے ذہنوں میں شکوک بڑھ رہے ہیں کہ نئے بیراج کی زمینیں باہر کے لوگوں کو دی جائیں گی۔ اگر ایسا کیا جا رہا ہے تو اس کے بعد سندھ اور وفاقی حکومتیں سندھ کے لوگوں سے تعاون کی توقع نہ رکھیں۔ سندھ کے ہاریوں کا ان زمینوں پر پہلا حق ہے۔ سندھ کے ہاری کے پاس ہل نہیں تھا وہ ہندوؤں کی زمینیں کاشت کرتے تھے۔ اور اب پہلے سے زیرِ کاشت زمینیں مہاجروں کو دی گئی ہیں، اور نئی زمینیں نوکر شاہی کو دی جائیں گی‘۔ اس اداریے میں سندھ کی سیاسی جماعتوں اور لوگوں سے اپیل کی گئی تھی کہ وہ اس کے خلاف آواز اٹھائیں۔
ساٹھ کے عشرے میں گدو بیراج تعمیر ہوا تو تربیلا ڈیم ، منگلا ڈیم، اور اسلام آباد کے متاثرین، ریٹائرڈ اور عنقریب ریٹائرڈ ہونے والے ملازمین، انعام اور خطاب پانے والوں کو اور نیلام کے ذریعے یہ زمین دینے کا فارمولہ بنایاگیا۔
صورتحال یہ بنی کہ زمین حاصل کرنے والے 172 سرکاری اہلکاروں میں صرف ایک سندھی تھا۔ نیلامی کی زمینوں کا فائدہ صرف پنجاب کو ہوا۔ سندھ میں کہاوت کے طور پر کہا جانے لگا کہ خدا کرے کسی کو کوئی خطاب نہ ملے یا کوئی کھلاڑی اچھا کھیل نہ کھیلے کیونکہ اس کا معاوضہ سندھ کی ہی زمین دینے کی شکل میں ادا کیا جائےگا۔ سندھی عوام کی مہاجروں اور پنجابیوں سے ان بن کی جڑیں اسی غیر منصفانہ تقسیم میں ہیں۔
جب ون یونٹ بنا تو فیصلہ سازی، تمام سرکاری ریکارڈ، سب کچھ لاہور منتقل ہوگیا۔ ملازمتوں کے دروازے بھی سندھ کے لوگوں کے لیے بند ہوگئے۔ اختیار و اقتدار کی لاہور منتقلی اور ون یونٹ کا قیام اور مزید پنجابی آبادی کے سندھ میں بسنے کا باعث بنی۔
میر علی محمد
پیر علی محمد راشدی بادشاہ گر لیکن ون یونٹ بنانے میں پیش پیش

کراچی کو سندھ سے الگ کرنا
ابھی دیہی و شہری آبادی میں جائیدادوں پر قبضے کے معاملے چل ہی رہے تھے کہ سندھ کے عوام پر دوسرا حملہ کیا گیا۔ سندھیوں کے معاشی، سیاسی اور ثقافتی مرکز کراچی کو وفاقی دارالحکومت بنانے اوراسے وفاق کے حوالے کرنے کا منصوبہ بنایا گیا۔
سندھی لیڈروں کے وفد نے زیارت میں جا کر قائد اعظم سے ملاقات کی اور کراچی کو وفاق کے حوالے کرنے کی مخالفت کی۔ قائد اعظم کا کہنا تھا کہ اس سے سندھ کے لوگوں کا فائدہ ہے۔ جولائی انیس سو اڑتالیس کو گورنر جنرل کے حکم پر کراچی اور اس سے ملحقہ علاقوں سمیت 812 مربع میل مرکزی حکومت کے حوالے کردیا گیا۔
قائد اعظم انتقال کر گئے اور ان کے بعد کراچی کے سلسلے میں سندھی عوام کے خدشات درست ثابت ہوئے۔
کراچی کو سندھ سے الگ کرکے وفاقی علاقہ بنانے کے فیصلے کے خلاف سندھ سراپا احتجاج بن گیا۔ اس مسئلے پر قائم ہونے والے سندھ عوامی محاذ کے سینکڑوں کارکنوں کو جیل بھیج دیا گیا۔ بگڑتی ہوئی صورتحال کےپیشِ نظر وزیر اعظم لیاقت علی خان نے ایک پنجابی وکیل دین محمد کو سندھ کا گورنر بنایا۔ اس پر سندھ کے عوام نے مزید ناراضگی کا اظہار کیا۔ نئے گورنر نے سندھ میں اسیمبلی توڑ کر گورنر راج نافذ کردیا۔
کراچی کو وفاق کی تحویل میں دینے سے سندھ کو زبردست مالی نقصان اٹھانا پڑا۔ دستور ساز اسمبلی کی رپورٹ نے نقصان کا اندازہ چھ سو سے آٹھ سو ملین روپے تک لگایا۔ جن عمارتوں میں وفاقی ادارے قائم کیے گئے ان کی مالیت پینتالیس کروڑ بنتی تھی۔ وعدے کے مطابق یہ خسارہ وفاق کو پورا کرنا تھا لیکن ایسا کوئی قدم نہیں اٹھایا گیا۔
پولیس کا لاٹھی چارج
سندھ عوامی محاذ کے سینکڑوں کارکنوں کو جیل بھیج دیا گیا

وفاق کی تحویل میں جانے کے باوجود کراچی میں سب سے بڑے ہسپتال، تمام تعلیمی اداروں وغیرہ پر اٹھنے والے اخراجات حکومتِ سندھ ادا کرتی رہی۔
دستور ساز اسمبلی کی رپورٹ کے مطابق 1955 میں یعنی قیام پاکستان کے سات سال بعد کراچی میں سندھ کی جائیداد کی قیمت 96 کروڑ پچاس لاکھ تھی۔ چنانچہ حکومت سندھ کا بجٹ مستقلاً خسارے کا بجٹ بن کر رہ گیا۔
پانی اور مالیات کے مسائل
سندھ کے حوالے سے دو اور امور بڑے متنازع رہے ہیں جن میں دریائے سندھ کے پانی کی تقسیم اور قومی مالیاتی ایوارڈ شامل ہیں۔ ان دونوں معاملات پر خاص طور پر سندھ اور پنجاب کے درمیاں اتفاق رائے نہیں ہو سکا۔
پانی کا معاہدہ ایک ایسے دور میں ہوا جب سندھ میں مرکز کی مسلّط کردہ جام صادق کی غیر مقبول حکومت تھی۔ سندھیوں کو ہمیشہ شکایت رہی ہے کہ اس معاہدے میں ان کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے لیکن آگے چل کر اس معاہدے پر بھی حکومتِ پنجاب نے عمل کرنے سے انکار کردیا۔
قومی مالیاتی ایوارڈ مرکز اور صوبوں کے درمیان مالی وسائل اور آمدن کی تقسیم کا فارمولہ ہوتا ہے۔ اس میں یہ بھی طے کیا جاتا ہے کہ کس صوبے کو کتنی رقم ملے گی۔
اس ایوارڈ کا فیصلہ بھی فاروق لغاری کے نگران دور میں کیا گیا۔ یہ اور بات ہے کہ اس وقت سندھ میں نگراں وزیراعلیٰ ممتاز بھٹو تھے اور اس معاہدے پر ان کی ہی پارٹی کے نبی بخش بھرگڑی کے دستخط ہیں۔
یہ وہ مسائل ہیں جن کو پس منظر میں رکھ کر سندھ کا مسئلہ سمجھا جا سکتا ہے۔ انہی مسائل پر صوبے میں بے چینی اور عدم اطمینان رہا اور وقتاً فوقتاً تحریکیں بھی چلتی رہی ہیں۔

پاکستان کے ساٹھ سال اور سندھ (حصہ دوم)

سہیل سانگی
وقتِ اشاعت: Monday, 27 August, 2007, 12:29 GMT 17:29 PST

سندھ کی سیاسی تحریکیں
گزشتہ ساٹھ سال کے دوران سندھ میں کئی تحریکیں اٹھیں۔ لیکن ان میں سے تین ایسی تھیں جنہوں نے اسلام آباد کے ایوانوں کو ہلا دیا۔ وہ تحریکیں تھیں 1968 اور 1969 کی ون یونٹ مخالف تحریک، 1983 کی ایم آر ڈی تحریک، اور 1986 کی تحریک۔
ان تینوں تحریکوں کی شدت، مقاصد، کردار وغیرہ الگ الگ تھے لیکن ان تحریکوں کے علاوہ طلباء، مزدوروں اور کسانوں نے بھی کئی تحریکیں چلائیں۔
آٹھ جنوری کی طلبہ تحریک
1953 میں ڈیموکریٹک سٹوڈنٹس فیڈریشن کی اپیل پر کراچی کے طلباء نے احتجاج کیا۔ پولیس نے زبردست لاٹھی چارج کیا اور بڑے پیمانے پرگرفتاریاں کیں۔ دوسرے دن اس سے بھی بڑا جلوس نکالا گیا۔ جس میں عام شہری بھی شامل ہوگئے۔ پولیس نے گولیاں چلائیں۔ ستائیس افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوگئے۔
سندھ کے قومی حقوق کی تحریک
صوبائی اسمبلی توڑنے کے بعد ضمنی انتخابات ہوئے۔ لبرل رہنما عبدالستار پیرزادہ نے حکومت بنانے کے لیے کراچی کی سندھ کو واپسی، مرکزی اداروں میں سندھیوں سے امتیازی سلوک کا خاتمہ، فوجی افسروں کو سندھ میں زمینیں دینے پر ممانعت جیسے مطالبات رکھے۔ ان دنوں پنجاب سے تعلق رکھنے والے نواب افتخار حسین ممدوٹ کو سندھ کا گورنر بنایاگیا جنہوں نے ستار پیرزادہ کی حکومت ختم کرکے ایوب کھوڑو کو بحال کردیا۔
جی ایم سید
جی ایم سید کا کارکنوں کے ساتھ گروپ فوٹو

بعد میں ایوب کھوڑو، پیر علی محمد راشدی اور ممدوٹ کے ذریعے ون یونٹ نافذ کردیا گیا۔ ون یونٹ کا قیام ویسے تو بنگال کے ساتھ برابری کے لیے تھا لیکن سندھ کو بھی اس نئے ڈھانچے میں بڑا نقصان ہوا۔
ایک طرف سندھ کے لوگ اپنے معاشی وسائل اور جائیداد ک مسائل محسوس کر رہے تھے تو دوسری طرف انہیں زبان اور ثقافت خطرے میں دکھائی دینے لگی تھی۔ شاید اسی لیے سندھ کی قومی تحریک ایک نکاتی مطالبے پر مرکوز ہوگئی یعنی ون یونٹ کا خاتمہ۔
حیدربخش جتوئی، جی ایم سید اور شیخ عبدالمجید سندھی نے اینٹی ون یونٹ فرنٹ قائم کیا جس کی تائید عوامی لیگ اور آزاد پاکستان پارٹی نے بھی کی۔
اکتوبر سن 58 میں ایوب خان نے مارشل لاء نافذ کردیا جس کی تیاری اگرچہ خاصے عرصے سے تھی لیکن سندھ کے لوگوں کا خیال ہے کہ یہ مارشل لاء ون یونٹ کو بچانے کے لیے لگایا گیا تھا۔
ہاری تحریک
پچاس کی دہائی کے آغاز پر سندھ کے ہاریوں نے حیدر بخش جتوئی کی قیادت میں سندھ اسمبلی کا گھیراؤ کیا اور سندھ ٹیننسی ایکٹ منظور کرایا۔
حیدر بخش جتوئی
حیدر بخش جتوئی کی قیادت میں ہاریوں نے سندھ ٹیننسی ایکٹ منظور کرایا

ہاریوں کے حقوق کے لیے بننے والا یہ پہلا قانون تھا۔ اسی کے چند برس بعد ہاریوں نے سندھ میں بٹئی تحریک چلائی جس کا مقصد یہ تھا کہ زرعی پیداوار کے نصف کا مالک ہاری ہوگا۔ یہ تحریک خاصے علاقوں میں بڑے زور وشور سے چلی۔ بعض مقامات پر ہاریوں نے اپنا حصہ لینے کے لیےباضابطہ مزاحمت بھی کی۔
جیئے سندھ تحریک
ان تمام مسلسل واقعات کے بعد سندھ میں پہلے بے قاعدہ اور بعد میں باقاعدہ ایک سوچ، ایک تحریک نے جنم لیا جسے بعد میں جیئے سندھ تحریک کا نام دیاگیا۔ ابتدائی طور پر اس تحریک کو روایتی زمینداروں اور درمیانے طبقے کی حمایت حاصل تھی۔ اس تحریک کے روحِ رواں جی ایم سید تھے تاہم اس کی بنیادوں میں حیدربخش جتوئی، قاضی فیض محمد، شیخ عبدالمجید سندھی، ہاشم گزدر جیسے کئی رہنما اور کئی گمنام کارکن اور رہنما شامل تھے جن کا اب تاریخ میں کوئی باقاعدہ ذکر نہیں ملتا۔
آگے چل کر جب جی ایم سید نے اسے باقاعدہ تنظیمی شکل دی تو جیئے سندھ تحریک پر یہ بھی الزام عائد کیا گیا کہ اس کا بھارتی حکومت سے تعلقات ہیں۔ ابتدائی طور پر یہ تحریک ثقافتی سطح پر رہی اور سیاسی مقاصد کو آگے نہ لا سکی۔
ذوالفقار بھٹو
پیپلز پارٹی واحد جماعت سمجھی جاتی تھی جو سندھ کو قابو میں رکھ سکتی تھی

ایوب خان کا سبز انقلاب اور زرعی اصلاحات سندھ کی دیہی آبادی کا کوئی زیادہ بھلا نہ کر سکے۔ البتہ سبز انقلاب کا فائدہ زمینداروں کو ضرور ہوا۔ عجیب بات ہے کہ اس سبز انقلاب سے فائدہ اٹھانے والے زمیندار ہی بعد میں ایوب کے مخالف ہوکر کھڑے ہوگئے۔
اسی اثناء میں ایک زمیندار اور پُرکشش قیادت رکھنے والے ذوالفقار علی بھٹو میدان میں آگئے۔ انہوں نے سندھ کی بے چینی کو استعمال کر کے مقبولیت حاصل کر لی۔ پیپلز پارٹی کا کردار دوہرا رہا۔ وہ صوبائی سطح پر سندھ کے مسائل اور ملکی سطح پر نچلے طبقے کے روٹی، کپڑا اور مکان جیسے مسائل اٹھا رہی تھی۔ اس کے ساتھ ساتھ یہ بھی کہ پیپلز پارٹی واحد جماعت ہے جو سندھ کو قابو میں رکھ سکتی ہے۔
ایوب خان اور ون یونٹ کے خلاف تحریک
ون یونٹ قیام کے بعد سندھ میں چھوٹی بڑی تحریکیں چلتی رہیں لیکن باقاعدہ تحریک کی شکل اس وقت بنی جب مغربی پاکستان کے گورنر کالا باغ نے سندھ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کا ایک کمشنر کے کہنے پر تبادلہ کیا۔
چار مارچ 1967 کو سندھ یونیورسٹی کے طلباء جب کیمپس سے بسوں میں سوار ہو کر حیدر آباد شہر میں مظاہرہ کرنے آ رہے تھے تو شہر کے باہر ہی روک کر لاٹھی چارج کیا گیا اور سینکڑوں کی تعداد میں گرفتاریاں ہوئیں۔
یحییٰ خان
ایوب خان نے اقتدار اپنے ساتھی یحییٰ خان کو سونپ دیا

اس واقعے نے سندھ میں سیاسی سرگرمی کو نئی جِلا بخشی اور یہ ایک تحریک کی شکل اختیار کر گئی۔ اس کے بعد اس تحریک میں سندھ کے ادیب، دانشور، اور عام لوگ بھی شامل ہوگئے۔
1968 اور 1969 کی تحریک زیادہ شدید تھی جس نے نہ صرف سندھ کے اندر بلکہ پورے ملک میں ایک انقلابی صورتحال پیدا کردی تھی۔ اس تحریک میں اگرچہ قوم پرستی کا رنگ شامل تھا لیکن اپنے جوہر میں یہ تحریک طبقاتی اور جمہوری تھی۔
یہ واحد موقع تھا جب سندھ کی دیہی اور شہری آبادی متحد تھی اور تمام لسانی، قومی، مذہبی تعصبات سے بالاتر تھی۔ شہری علاقوں میں مزدور تحریک چلا رہے تھے اور دیہی علاقوں میں کسان اور درمیانہ طبقہ بغاوت کیے ہوئے تھا۔
اس دور میں قوم پرستوں کے تمام تر کام کے باوجود بھٹو نے بے پناہ مقبولیت حاصل کی اور جب ستّر کے انتخابات ہوئے تو لوگ پیپلز پارٹی اور بھٹو کے عشق میں اس حد تک چلے گئے کہ ’ووٹ پی پی کا اور سر مرشد کا‘۔
تحریک کے نتیجے میں جنرل ایوب کو جانا پڑا لیکن وہ اقتدار اپنے ساتھی جنرل یحییٰ خان کے حوالے کر گئے۔ ستّر کے انتخابات سے پہلے یحییٰ خان نے ون یونٹ توڑنے اور صوبے بحال کرنے کا اعلان کیا تو کراچی سندھ کو واپس مل گیا۔ اس سے سندھی آبادی کو خاصی تشفی ہوئی۔
لسانی بنیادوں پر تقسیم
 سندھ زبان کا بل اور کوٹہ سسٹم کا نفاذ سندھ کے دیہی آبادی کا تو کوئی بھلا نہیں کر پایا بلکہ اس سے سندھ کی شہری آبادی میں لسانی بنیادوں پر تقسیم ہوگئی۔ اس بات نے تنگ نظر چھوٹے مقامی لیڈروں کو مہاجر، پٹھان اور پنجابی آبادیوں میں جنم دیا
عام انتخابات کا اعلان ہوا تو ایک مرتبہ پھر سندھ کے لوگوں نےتحریک کے تسلسل کو جاری رکھا اور مطالبہ کیا کہ انتخابی فہرستیں سندھی میں بنائی جائیں۔ اس کے لیے بھوک ہڑتال کا سلسلہ شروع ہوا جو حیدرآباد شہر کے مشہور حیدر چوک پر کئی دنوں تک جاری رہا۔ اس موقع پر ایک بار پھر سندھی مہاجر فسادات کرانے کی کوشش کی گئی۔
جب صدر جنرل یحییٰ خان نے انتخابی نتائج ماننے سے انکار کیا تو بھٹو نے بطور مغربی پاکستان کے لیڈر کے یحییٰ خان کا ساتھ دیا اور بنگلہ دیش میں سِول لڑائی شروع ہوگئی۔ بنگلہ دیش کی آزادی کی جنگ کے دوران سندھ نے اکّا دکّا اظہار کیا تاہم کوئی بھرپور اظہار سامنے نہیں آیا۔
1971 میں جب پی پی انقلاب کی راہ چھوڑ کر اصلاحات کی طرف آئی تو یہ تحریک دم توڑ گئی اور معاملات لسانی اور قوم پرستی کی بنیادوں پر تقسیم ہوگئے۔ پیپلز پارٹی کی اصلاحات نے قومی سوال کو حل کرنے کی بجائے اس کو مزید الجھایا اور شدید کیا۔
بنگلہ دیش کی آزادی کے بعد مہاجروں کی نئی کھیپ جن کو عرف عام میں بہاری کہا جاتا ہے سندھ میں آنا شروع ہوگئی۔ یہ کھیپ بھی لاکھوں میں تھی۔
سندھ زبان کا بل اور کوٹہ سسٹم کا نفاذ سندھ کے دیہی آبادی کا تو کوئی بھلا نہیں کر پایا لیکناس سے سندھ کی شہری آبادی لسانی بنیادوں پر تقسیم ہوگئی۔ اس بات نے مہاجر، پٹھان اور پنجابی آبادیوں میں تنگ نظر چھوٹے مقامی لیڈروں کو جنم دیا۔ اس زمانے میں سندھی مہاجر فسادات ہوئے جس میں فریقین کے درجنوں افراد ہلاک ہوگئے۔ یہیں سیاست میں تشدد کا عنصر آنا شروع ہوگیا۔
بھٹو کا جنازہ
بھٹو کی پھانسی نے سندھ تحریک کو بے پناہ طاقت دی

یہ عجیب بات ہے کہ سندھ میں لسانی فسادات پیپلز پارٹی کے ہی دور میں ہوئے۔ یہ فسادات ایک طرح سے مہاجر آبادی کی ناراضگی کا اظہار تھے جو اقتدار سے محروم ہو چکی تھی۔
بعد میں ان کے اطمینان کے لیے سندھ میں اردو سندھی دونوں کو سرکاری زبان بنایا گیا اور اسی کے ساتھ سابق وزیر اعظم لیاقت علی خان کی بیوی بیگم لیاقت علی خان کو سندھ میں گورنرمقرر کیا گیا اور ون یونٹ ٹوٹنے کے بعد سندھیوں کے تسلّط کا خوف محسوس کرنے والے مہاجروں کے اطمینان کے لیے غیر تحریری طور پر یہ معاہدہ طے ہوا کہ سندھ کا گورنر سندھی نہیں ہوگا۔
لہٰذا آج تک اس پر عمل درآمد ہو رہا ہے۔ مہاجروں کے اس بڑھتے ہوئے اثر کو روکنے کے لیے سندھی قوم پرست طلباء نے اردو بولنے والے لیکن پیپلز پارٹی کے صوبائی وزیر بدیع الحسن زیدی کو کراچی سے حیدر آباد آتے ہوئے جام شورو کے پاس اغواء کر لیا۔ انہیں کئی دن بعد مذاکرات کے ذریعے بازیاب کرایا گیا۔
پیپلز پارٹی کے اقتدار میں آنے سے سندھیوں کو اربنائزیشن (شہری) دھارے میں شامل ہونے کے لئے کچھ جگہ ملی۔
ایم آرڈی تحریک
1979 میں بھٹو حکومت کا تختہ الٹنے اور 1979 میں پھانسی نے سندھ میں قومی تحریک کو بے انتہا طاقت دی۔ اس کی علامت بھٹو تھا جو سندھ سے تعلق رکھتا تھا۔
ضیاء الحق
’ضیاء نے سندھ میں جو مظالم کیے وہ کسی طور پر انگریز سامراجیوں سے کم نہ تھے‘

ضیاء کا پس منظر اور اس کے کام سندھ میں اس کے خلاف نفرت پیدا کرنے کے لیے کافی تھے۔ ایم آر ڈی کی تحریک جو ملک گیر تھی لیکن اس کا عملی اظہار کچھ اس طرح ہوا کہ سندھ میں اس نے اتنی شدت اختیار کر لی کہ یہ تحریک سندھ کی تحریک کے طور پر ہی پہچانی جانے لگی۔
ضیاء نے سندھ میں جو مظالم کیے وہ کسی طور پر انگریز سامراجیوں سے کم نہ تھے جو انہوں نے برصغیر میں روا رکھے تھے۔اس بات نے سندھ میں فوجی حکومت کے خلاف ایک طاقتور تحریک کو جنم دیا۔
سرکاری اعداد وشمار یہ ہیں کہ اس دور میں 1263 لوگوں کو قتل کیا گیا اور ہزاروں کو زخمی کیا گیا۔ مظاہرے، جلوس، قید، کوڑے، پھانسیاں اور فوج کے ہاتھوں لاکھاٹ (سکرنڈ) اور میہڑ (دادو) میں مظاہرین کی ہلاکت اس تحریک کے بہت بڑے واقعات تھے۔
ایم آر ڈی تحریک کے دور میں بہادری اور شجاعت کے کئی ایک واقعات ہوئے جو اب سندھ میں لوک ادب کا حصہ بن گئے ہیں۔
یہ پہلا موقع تھا کہ سندھ کی دیہی آبادی نے فوجی آمریت کے خلاف اور اپنے حقوق کے لیے مکمل طور پر بغاوت کا اعلان کیا۔ سندھ میں شاید ہی ایسا کوئی گھر ہو جس نے اس تحریک میں حصہ نہ لیا ہو۔ اگرچہ اس کا رنگ ایک حد تک قوم پرستانہ تھا لیکن نچلی سطح پر عمومی طبقاتی تھی۔
محمد خان جونیجو
سندھ میں ضیاء کے خلاف نفرت کو ٹھنڈا کرنے کے لیے جونیجو کو وزیرِ اعظم بنایا گیا

یہ تحریک اس وجہ سے ناکام ہوئی کہ حکمران سندھ اور دیگر صوبوں کے شہروں میں لسانی بینادوں پرنفرت پھیلانے میں کامیاب ہوگئے تھے۔ اس تحریک کے توڑ کے لیے کراچی میں ایم کیو ایم، سندھ پنجابی پشتون اتحاد اور مذہبی بنیاد پرستی کو ابھارا گیا۔ یہ وہ وقت تھا جب تحریک اپنی طبقاتی شکل اختیار کر رہی تھی۔
اس کے باوجود یہ تحریک جاری رہی۔ اس دور میں جب جب قومی تضادات طبقاتی تضادات کے ساتھ جڑے تو معاملہ خاصا گرم ہو گیا۔
اس تحریک اور سندھ میں ضیاء کے خلاف نفرت کو ٹھنڈا کرنے کے لیے غیر جماعتی انتخابات کے نتیجے میں سندھ سے محمد خان جونیجو کو وزیرِ اعظم بنایا گیا لیکن آگے چل کر جنرل ضیاءالحق نے انہیں برطرف کر دیا۔
مبصرین کا کہنا ہے کہ یہ تحریک مزید کامیاب ہو جاتی اگر ایم آر ڈی اور پیپلزپارٹی کے رہنما انقلابی یا طبقاتی مطالبات سے گریز نہ کرتے۔ اگر ایسا ہو جاتا تو صوبوں اور شہری اور دیہی آبادی کے درمیان مزید بھائی چارہ ہوتا لیکن حکمران طبقہ جس میں ایم آر ڈی کے لیڈران بھی شامل تھے اس سے ڈرگئے تھے۔
سندھ کا احساسِ محرومی
 پاکستان کی تاریخ میں سندھ سے تین وزیر عظم رہے۔ ذوالفقار علی بھٹو، محمد خان جونیجو، اور بینظیر بھٹو۔ ان تینوں کو فوجی حکومت نے ہٹایا جس وجہ سے ان کی فوج کے خلاف نفرت اور احساس محرومی میں اضافہ ہوا
انیس سو چھیاسی کی تحریک
انیس سو چھیاسی کی تحریک ضیاء کے تابوت میں آخری کیل تھی۔ اس تحریک کا بڑا واقعہ بینظیر بھٹو کی وطن واپسی اور ملک بھر میں نکالی گئی ریلیاں تھیں لیکن بینظیر بھٹو کا اقتدار میں آنا اور جمہوری دور کی آمد معاہدوں کی نذر ہوگئے اور حقیقی مقاصد حاصل ہی نہ ہو سکے اور نہ ہی کوئی بہت بڑی تبدیلی آ سکی۔
یہ رسمی جمہوری دور چھوٹی قومیتوں کے لیے مزید تکلیف کا باعث بنا کہ مجموعی طور پر اظہار اور تقریر و تحریر کی آزادی نے ان لوگوں میں یہ احساس مزید بڑھایا کہ وہ کتنی تکلیف میں ہیں۔ وہ اپنی عدالتوں، اپنے افسران ، ثقافت وغیرہ سے محروم ہیں۔
شہری آبادی کی تحریک
1984 میں ایم کیو ایم وجود میں آئی۔ تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ اس کے مقاصد میں چاہے کچھ بھی رکھا گیا ہو لیکن دراصل مہاجر اس پوزیشن کو دوبارہ حاصل کرنا چاہتے تھے جو انہیں پاکستان بننے کے بعد ایک عشرے تک مرکزی اور صوبائی حکومتوں اور فیصلہ سازی میں حاصل تھی۔
یہ پوزیشن دراصل کراچی کے مرکزی دارالحکومت بننے اور پنجاب اور پٹھان آبادی کے بڑے پیمانے پر اس شہر میں آ کر بسنے، ون یونٹ کے بعد مغربی پاکستان کا دارالحکومت لاہور منتقل ہونے سے خاصی متاثر ہوگئی تھی۔
لڑاؤ اور حکومت کرو

 ایم کیو ایم کا فروغ ریاست کی سطح پر محنت کش طبقے کو نسلی، لسانی اور قوم پرستانہ بنیادوں پر تقسیم کرنا تھا۔ یہ ’لڑاؤ اور حکومت کرو‘ والی پالیسی کا تسلسل تھا
ایک اور نقصان اس وقت ہوا جب وفاقی دارالحکومت اسلام آباد منتقل ہوگیا۔ یوں مرکزی چیزوں پر پنجابی اور پٹھان نے نہ صرف اپنی حصہ داری بڑھا دی بلکہ باقی حصے میں سندھیوں کو بھی شراکت کرا دی تو مہاجر اپنے آپ کو تنگ محسوس کرنے لگے۔
یوں مہاجروں میں اپنی الگ سیاست کرنے کا خیال پیدا ہوا۔ ایم کیو ایم کا پہلا جھگڑا پٹھانوں کے ہی ساتھ ہوا جب بشرا زیدی کیس میں دونوں فریقین نے ایک دوسرے کے خلاف ہتھیاروں کا استعمال کیا۔
ضیاء حکومت کے غیر جماعتی انتخابات نے ملکی اور صوبائی سیاست پر زیادہ منفی اثرات ڈالے۔
پیپلز پارٹی کو کمزور کرنے کے چکر میں قوم پرستوں کو مراعات دینے یا خوش کرنے کی کوشش کی گئی۔ یہ حکومت کا جانبدارانہ رویہ تھا جس کے جواب میں مہاجریت کو ابھار ملا۔
ایم کیو ایم کا فروغ ریاست کی سطح پر محنت کش طبقے کو نسلی، لسانی اور قوم پرستانہ بنیادوں پر تقسیم کرنا تھا۔ یہ ’لڑاؤ اور حکومت کرو‘ والی پالیسی کا تسلسل تھا۔
افغان جنگ اور اس کی طرف پاکستان کے رویے کے نتیجے میں پندرہ لاکھ سے زیادہ افغانی سندھ میں آگئے جن کی اکثریت اب بھی کراچی میں رہ رہی ہے اور اس کی واپسی کا کوئی امکان نہیں ہے۔
جیئے سندھ نے مارشل لاء حکومت کی جزوی مخالفت اور حمایت والی پالیسی اختیار کی۔ ضیاء کو جی ایم سید کی عیادت کرنے جناح ہسپتال آنا پڑا اور ایم آر ڈی تحریک کے دوران سید کے آبائی گاؤں سن بھی جانا پڑا۔
ستّر اور اسّی کی دہائی میں بائیں بازو کی جماعت اور لیڈروں کی مقبولیت بڑھنا شروع ہوئی۔ اس دور میں کامریڈ جام ساقی اور رسول بخش پلیجو لیڈر کے طور پر ابھرے۔
پاکستان کی تاریخ میں سندھ سے تین وزیر عظم رہے۔ ذوالفقار علی بھٹو، محمد خان جونیجو، اور بینظیر بھٹو۔ ان تینوں کو فوجی حکومت نے ہٹایا جس وجہ سے سندھ میں فوج کے خلاف نفرت بڑھی اور احساس محرومی میں اضافہ ہوا۔
دریائے سندھ کے پانی کی تقسیم اور گریٹر تھل کینال کی تعمیر پر سندھ کی قوم پرست، مذہبی اور وفاق پرست جماعتیں سب متفق ہیں اور وہ انفرادی یا اجتماعی طور پر احتجاج کرتی رہی ہیں۔
اس وقت کالا باغ ڈیم اور وسائل کی تقسیم ایسے معاملات ہیں جن سے دوریاں روز بروز بڑھ رہی ہیں۔

Human Memory is short and in case of Liar Reporters/Journalists of Pakistan i.e. Mr. Shaheen Sehbai and Mr. Ansar Abbasi it is proven beoynd doubt that Allah snatch Memory from Liars because in the above news Jang Groups quotes and Intelligence Agency Report [read table story] whereas both of these Journalists indulged in Yellow Journalism to the core had themselves running an Election Campaign for Mr Justice Iftikhar Muhammad Chaudhry by filing reports about the same Sindhi Nationalists, read How Mr. Shaheen and Mr. Ansar incited Ethnic Hate themselves through Daily Jang/The News International and GEO TV. GEO TV/JANG GROUP’s Message of Hate for Pakistan. 

WASHINGTON/ISLAMABAD: The US capital and the world is watching for the ultimate battle on the D-Day on Monday in what has now turned into a fatal fight to the finish between two personalities — President Asif Zardari and Chief Justice Iftikhar Muhammad Chaudhry. Only one will survive. Zardari has all the power that anyone can muster in any country, but he also has the biggest stakes on line. His power grab in the last few months is not helping him and he is fighting a losing battle. Iftikhar Chaudhry has no powers but he has the entire country behind him and that makes him the most powerful commander leading his troops to ultimate victory. His troops, Nawaz Sharif, Ali Kurd, Aitzaz Ahsan, the media, lawyers, politicians, rights activists and the people at large have been deceived so many times that no more promises or assurances of the Zardari camp carry any weight. Thus foreign guarantors are being sucked into the equation.



The Army, the ultimate protector of the external and internal security fronts, has been caught in a dangerous bind. While it was hard pressed fighting the terrorists and their creeping coups, President Zardari has opened a much wider and a potentially suicidal confrontation which had brought the entire country to a standstill, even before the long march could start or converge at a point. The Army is in no position to fight such a divisive and extended war with its own people, for the interests of a few misguided and incompetent leaders who failed to grow into the large shoes they landed in, by the stroke of luck after the ultimate sacrifice of Benazir Bhutto. While leaders like Maulana Fazlur Rehman are, in sheer desperation, trying to give the phenomenal rising of the people for a national cause the colour of a possible threat to the federation, all those leading the movement have repeatedly said the objective of their struggle is to attain the objective of reinstatement of Nov 2 judiciary and not to dislodge the present PPP government. Mian Nawaz Sharif, Qazi Hussain Ahmad, Imran Khan and the lawyers’ leadership have said in one voice that the government must listen to what the nation demands. The Jamaat-e-Islami chief has even asked Army chief Gen Ashfaq Parvez Kayani to use his pressure on the government to meet the public demand for the independence of judiciary instead of exploiting such a situation for a military intervention to grab power, a la Ziaul Haq or Musharraf.



Given the public mood and the thinking of the political leaders military intervention is not possible and would be strongly resisted if foolishly resorted to. Critical mistakes have been made by Zardari-controlled war room, set up in the bunker inside the presidency. When Punjab was forcibly taken over by the governor to physically stop the long march and the entire transport system, official and private, was hijacked to block every road, two days before the D-Day word was sent out that the Shahbaz Sharif government was being restored in a few days. Given our bureaucratic mindset, the entire Punjab administration was paralysed that very moment because no officer, junior or senior, would take action against an ousted chief minister or his party, if he was to regain power in a few days. Hence there are numerous reports that the Punjab police and the administration was helping the Sharifs break the barriers or even smuggle them in police vehicles to dodge orders of a governor who was about to be sacked. It is simple logic.

Sardar Mumtaz Ali Khan Bhutto Interviewed by Atiqa Odho 1 of 5


Sardar Mumtaz Ali Khan Bhutto Interviewed by Atiqa Odho 2 of 5


A senior government official, who drove to Islamabad from Lahore hours before the long march started towards Islamabad, reported the mood of the civil administration and the police in Punjab had changed altogether. He said officials were no more inclined to block the long march because they themselves had felt the change in the wind. He claimed if a police force of 23,000 and other security personnel deployed in Lahore could not prevent the Lahorites from coming out on the streets despite the use of brutal police force and teargas, the long march would smoothly move toward Islamabad as the other districts do not have enough force to face huge crowds. According to a report, high-ranking police officers, of SSP rank and above, rushed inside the Lahore High Court and made speeches, apologising to the lawyers and the civil society. They said whatever had happened was wrong and from now on they won’t be a part of it. Rich traders of Lahore also come to the high court and categorically blamed it all on President Zardari. People were not chanting ‘Zardari ko jana hoga!’, rather they were saying, ‘Zardari to gaya!’ Asif Zardari has always been in a hurry to blow up the system that he suddenly inherited 14 months ago. He has overstretched his desire to become ‘General’ Asif Zardari, following in the footsteps of Gen Musharraf, for whom he still carries a soft spot.

Sardar Mumtaz Ali Khan Bhutto Interviewed by Atiqa Odho 3 of 5


Sardar Mumtaz Ali Khan Bhutto Interviewed by Atiqa Odho 4 of 5


Sardar Mumtaz Ali Khan Bhutto Interviewed by Atiqa Odho 5 of 5


Zardari began where Musharraf had peaked in terms of power. He had everything going for him, a supportive people, a unanimous parliament, a friendly opposition, a lovable media, a world ready to help. But he could not grasp the opportunity or even fathom the critical role he had been swept in. His destructive politics has led him to the present pass. The last card he has, and he has been saying this in private for some time, is the ultimate “Sindh card” which had been used off and on by Sindhi leaders when they were in trouble or cornered because of their failed policies or strategies. Zardari using the Sindh card would be an ultimate joke with the people. Why this appears a last ditch desperate effort is obvious as his cronies and loyalists like Rehman Malik and the foxy Maulana Fazlur Rehman have started raising this bogey. Malik has been referring to the “East Pakistan like” situation whereas nothing like it exists on the ground. Even in Sindh all the nationalists led my Mumtaz Bhutto, GM Syed Group, Rasool Bux Paleejo, the nationalists of other provinces including the Bizenjos, Mengals, Marris of Balochistan and even the coalition partners Bilors of Peshawar have been looking at the situation as a fight for an independent judiciary and not a threat to the federation. Most have been very vocal in support of the judges. Zardari does not realise that he has pushed himself to the wrong side of the political, civil and intellectual spectrum. While everyone is clamouring for judicial independence, and everyone includes top judges, lawyers, politicians, journalists, even generals and bureaucrats, using the Sindh card would be nothing but an act of desperation signalling acceptance of defeat. The argument that the PPP was being victimised once again will hold no water as the present shape of the Zardari-led PPP is not what Benazir Bhutto’s PPP looked like and stood for. Benazir Bhutto’s jiyalas are no longer jiyalas of Zardari, they have been sidelined and it has been proved beyond doubt that Zardari does not stand for what Benazir wanted or struggled for. Thus all the Sindhi PPP and non-PPP stalwarts, including even Makhdoom Amin Fahim, Nawab Yousuf Talpur, the Jatois, Bhuttos et al, will not let Zardari use the Sindh card. It is in fact no card at all. Sindh nationalists stand for return of judges By Shaheen Sehbai & Ansar Abbasi Monday, March 16, 2009

No comments: